پولیس کوملزمان پرکھلےتشددکےاحکامات جاری

Aug 23, 2017
[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/08/POLICE-CHITROL-CULTURE-LHR-PKG-23-08.mp4"][/video]

لاہور: آئی جی پولیس پنجاب نے اعلی حکام کی آنکھوں میں دھول جھونک کر پولیس کو کھل کر تشدد کرنے کی اجازت ديدی ۔ پولیس کوتشدد کی فوٹیجز اور تصاویر بنانے والوں کے موبائل فونز ضبط کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا ۔

پنجاب پولیس کے شیر جوان اب کھل کر تشدد کر سکيں گے۔ آئی پنجاب نے آرڈردے دیا۔

تھانوں میں تشدد روکنے کے بجائے تشدد کی خبروں کو منظر عام سے غائب کرنے کے لیے نیا پلان سامنے آگیا۔چھترول کلچر تبدیل کرنے میں ناکامی کے بعد آئی جی پنجاب کےحکم پر تھانوں میں ریکارڈنگ پر پابندی عائد کردی گئی ۔

تشدد کرنے کے ساتھ  پولیس کو بھی چوکس رہنے کا حکم جاری کردیا گیا۔پولیس والوں کوہدایت کی گئی ہےکہ جرائم پیشہ افراد پر نظر سے زيادہ اب فوٹیجز بنانے والوں پر نظر رکھیں۔

 پولیس تشدد روکنے میں ناکامی کو چھپانے کے لیے اب پنجاب کے تھانوں میں موبائل فونز سے فوٹیجز بنانے پر پابندی ہوگی۔اہلکار تھانوں میں عینک،بٹن یا پین رکھنے والوں پر کڑی نظر رکھیں گے۔

پولیس والوں نے ہدایت جاری کیں فوٹیجز بنانے والوں کے موبائل فونز سے ریکارڈنگ ضائع کی جائے یا پھر موبائل فون یا کیمرضبط کرلیا جائے گا۔ سماء

PUNJAB

Police Torture

Tabool ads will show in this div