جعلی ووٹنگ پر پریذائیڈنگ افسران گرفتار، رینجرز کی سزائیں اور جرمانہ

اسٹاف رپورٹ

کراچی : اين اے 246 کا انتخابی عمل جس جس نے خطرے ميں ڈالا، قانون بھی حرکت میں آیا اور ہاتھوں ميں ہتھکڑياں ڈال دی گئیں، پولنگ عملے کے 4 افسران رنگے ہاتھوں پکڑے گئے، ايک مشتبہ شخص بھی دھرليا گيا۔

اين اے 246 کا معرکہ سنسنی خيز تھا، قانون اور ذرائع ابلاغ چوکنا تھے، کيمرے الرٹ تھے، دھاندلی کا دھندلا سا امکان موجود نہ تھا، يوں جس نے انتخابی عمل خطرے ميں ڈالا، اُس کے ہاتھوں ميں ہتھکڑياں ڈال دی گئيں۔

دہلی کالج کريم آباد ميں بوگس ووٹنگ کرتا پريذائیڈنگ افسر سيد ماجد علی ووٹر ريحان سميت پکڑا گيا، دونوں 3 ماہ کيلئے جيل کی ہوا کھانے بھيج دیئے گئے، 5، 5 ہزار روپے کا جرمانہ الگ لگ گيا۔

شريف آباد کے زبيدہ اسکول پولنگ اسٹيشن کے اسسٹنٹ پريذائیڈنگ افسر جاويد صديق کو غلط بيلٹ پيپر جاری کرنے پر حراست ميں لے ليا گيا۔

غريب آباد ڈسپنسری پولنگ اسٹيشن سے اسٹیمپ چُرا کر باہر ليجاتے ہوئے ايک خاتون ووٹر دھرلی گئی۔

رينجرز نے دھاندلی کی کوشش ميں تعاون پر ڈسپنسری پولنگ اسٹيشن کی اسسٹنٹ پريذائیڈنگ افسر شاہ سلطانہ کو گرفتار کرليا۔

کے ڈی اے اسکول بلاک 14 فيڈرل بی ايريا سے 2 افراد کو گرفتار کيا گيا، ان افراد پر اسسٹنٹ چيف پولنگ ايجنٹ زاہد جدون کو دھمکياں دينے کا الزام ہے، ایک پولنگ اسٹیشن پر شینزل انصاری نامی خاتون سہیلی نوشین رئیس کے شناختی کارڈ پر ووٹ کاسٹ کرتے ہوئے پکڑی گئی۔

کے ڈی اے اسکول پولنگ اسٹیشن پر جعلی ووٹنگ کے الزام میں اسسٹنٹ پولنگ آفیسر قمر فاطمہ کو گرفتار کیا گیا۔ سماء

رینجرز

India vs Pakistan

افسران

steel

prosecutors

بوگس

Tabool ads will show in this div