رانی بیٹی راج کرے گی

Jul 18, 2017

Combined Wedding Rwp Isb Pkg 30-04

ہماری محلے دار نسرین آنٹی کی بیٹی شازمہ کی کچھ دن بعد شادی ہے اور ہمسائیگی کی وجہ سے میری امی اور پھوپھو شادی کی تیاری کے لئے اکثر ان کے ساتھ بازار کا چکر لگا آتی ہیں ۔ بتانے کی بات یہ ہے کہ آج کل وہ اس لئے پریشان ہیں کہ ان کی آخری اور لاڈلی بیٹی کے سسرال والے جہیز میں چنیوٹی فرنیچر کا تقاضا کر رہے ہیں جو کہ ظاہر ہے کہ مہنگا ہونے کی وجہ سے نسرین آنٹی کی پہنچ سے باہر ہے ۔اس لئے انھوں نے خالہ میمونہ کے ہاں دو کمیٹیاں بھی ڈال رکھی ہیں ۔ جس کی بنیادی وجہ شازمہ کے سسرال والوں کا من پسندجہیز ہے۔ایک طرف تو یہ وجہ ہے،دوسری وجہ یہ بھی ہے کہ وہ نہیں چاہتیں کہ ان کی بیٹی میں کوئی احساس کمتری پیدا ہو کہ اسے کم جہیز دیا گیا ہے اور باقی بہنوں کے مقابلے میں اس کے ساتھ زیادتی کی گئی ہے ۔

اگرچہ کہ وہ قرضے کے بوجھ تلے دب چکی ہیں لیکن بات وہی ہمارے زمانے کی ہے کہ جہاں چیزوں کو رشتوں سے زیادہ اہمیت دی جاتی ہے ، جہاں مادی اشیاء کو ہی سب کچھ سمجھ لیا جاتا ہے۔ ہمارے ہاں کئی ایسی بہنیں بیٹیاں رشتوں کے انتظار میں بوڑھی ہو رہی ہیں کہ کسی کے پاس مہنگا فرنیچر نہیں تو کسی کے پاس نئےماڈل کی گاڑی نہیں ۔

حالانکہ ان لڑکوں والوں سے کوئی یہ پوچھے کہ لڑکی کے گھر والے ہی سب کچھ بنوا کے دیں توکیافرنیچرآنے سے پہلے لڑکے کے گھر والے ٹاٹ پر سوتے تھے اور گھر کی جگہ ٹینٹ میں رہتے تھے ۔ اچھے فرنیچر کے لئے کبھی سٹنگ روم کے لئے آرائشی جھولوں کا تقاضا ہو رہا ہے تو کئی چھ بائی چھ کے بیڈ کی مانگ کی جا رہی ہے اور تو اور ڈرائنگ روم کے لئے بھی نئے صوفوں کے بارے میں بات کی جاتی ہے ۔

cultural-real-wedding-indian-weddings-chicago-il-gold-red-mahogony-bride-groom-hold-hands__full

گویا دلہن کے والد کی کوئی لاٹری نکل آئی ہے کہ کنگلوں کا گھر انھوں نے ہی بھرنا ہے۔لڑکیوں کے سسرال والے یہ کیوں نہیں سوچتے کہ ماں باپ کے پاس تو سب سے قیمتی اثاثہ اس کی بیٹی ہے جو شخص ان کو اپنی پڑھی لکھی،تہذیب یافتہ اورسلیقہ شعار لڑکی دےرہاہےوہ اور کون سی دولت ان کےنام کرے؟ یہ بھی لڑکےوالوں کی طرف سے سننےکوملتاہے کہ کیا ہوا جو آپ نے جہیز دیا ، ہمارے نبی نے بھی تو بی بی فاطمہ سلام اللہ علیہہ کو جہیز دیا تھا اور یہ بھی وجہ بتا کر لڑکیوں کے والدین کے منہ بند کر دئیے جاتے ہیں کہ آپ کوئی احسان نہیں کر رہے کیونکہ یہ سب سامان تو آپ کی بیٹی استعمال کرے گی ۔

دوسری طرف لڑکیوں کے والدین بھی اتنے پریشان ہیں کہ وہ بھی یہی سمجھتے ہیں کہ ان کی رانی جیسی بیٹی بہترین جہیز کی وجہ سے سسرال میں راج کرے گی جبکہ حقیقیت اس کے برعکس ہے۔میں نے بہت سے خاندانوں کو شادی کے باوجود اچھا جہیز ہونے کے باوجود اجڑتے ہوئے دیکھا ہے ، بہترین فرینچر اور گاڑیوں کے ہونے کی باوجود لڑکیوں کی آںکھوں میں آنسو دیکھے ہیں ۔

ان ماؤں کوسسکتے ہوئے دیکھا ہے جو طلاق کے بعد بھی اپنی بیٹیوں کا قیمتی سامان واپس نہیں لےسکیں۔حقیقت تو یہ ہے کہ یہ خواہشات ہمیں تباہی کی طرف لے کر جا رہی ہیں اس لئے کہ اچھا اور بہترین جہیز کامیاب ازدواجی زندگی کی ضمانت نہیں ہے۔دینا ہو تو لڑکیوں کو اچھی تعلیم و تربیت دیں ۔ان کے مستقبل کے لئے مثبت انداز میں سوچیں اور لڑکے والے بھی خدارا ایک خاندان بنانے کے ایک گھر بسانے کے بارے میں سوچیں ، بجائے اس کےکہ مادی چیزوں سے گھر بھرنے کا خواب دیکھاجائے۔

Tabool ads will show in this div