انکوائری کمیشن، مزید 14 گواہان طلب، عمران خان کا نام واپس

اسٹاف رپورٹ

اسلام آباد : مبینہ انتخابی دھاندلی کیلئے قائم انکوائری کمیشن نے پنجاب کے 7 حلقوں کے ریٹرنگ افسران کو جرح کیلئے طلب کرلیا، جماعت اسلامی اور مہاجر قومی مومنٹ کے دیگر 7 گواہان کو بھی بلالیا گیا، تحریک انصاف کے وکیل نے عمران خان کو بطور گواہ پیش کرنے کی درخواست واپس لے لی۔

چیف جسٹس ناصرالملک کی سربراہی میں انکوائری کمیشن کے اجلاس میں ق لیگ نے مختلف حلقوں سے ہارے ہوئے 7 امیدواروں کو بطور گواہ پیش کیا، جرح کے دوران گواہان نے بتایا کہ ان کے حلقوں کے ریٹرنگ افسران نے نوٹس جاری نہیں کئے اور امیدواران کی غیر موجودگی میں حتمی نتائج مرتب کئے۔

ق لیگ کی استدعا پر کمیشن نے این اے 164 پاکپتن، این اے 140 قصور، این اے 142 قصور اور این اے 134 شیخوپورہ کے آر اوز کو طلب کرلیا، پی پی 61 فیصل آباد، پی پی 109 گجرات اور پی پی 215 خانیوال کے ریٹرنگ افسران کو بھی پیش ہونے کی ہدایت کی گئی۔

تحریک انصاف کے وکیل عبدالحفیظ پیرزادہ نے عمران خان کو بطور گواہ بلانے کی درخواست واپس لیتے ہوئے ؤوقف اختیار کیا کہ ان پر جرح نہیں کرنا چاہتے۔

مہاجر قومی موومنٹ کی درخواست پر کمیشن نے سابق صوبائی الیکشن کمشنر سندھ احسن طارق قادری اور ایس ایس پی آفتاب احمد کو بھی پیش ہونے کی ہدایت کردی، کمیشن نے جماعت اسلامی کے 5 گواہان طلب کرتے ہوئے اجلاس کل تک ملتوی کردیا۔ سماء

نام

pardon

عمران خان

Tabool ads will show in this div