سندھ کا بجٹ آ گیا، تنخواہوں میں 10 فیصد اضافہ

ویب ایڈیٹر:

سندھ کا نئے مالی سال دوہزار پندرہ سولہ کا 7 سو 26ارب 57 کروڑ روپے کا بجٹ پیش کردیا گیا ۔ سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں10 فیصد جبکہ سیلزٹیکس ایک فیصد کم کیا گیا ہے۔

سندھ کا بجٹ صوبائی وزیر خزانہ سید مراد علی شاہ نے پیش کیا۔

سندھ حکومت نے سب سے پہلی ترجیح تعلیم کو دیتے ہوئے تعلیمی بجٹ میں گزشتہ سال کی نسبت 29 فیصد کا اضافہ کیا ہے، تعلیم کیلئے 144 ارب 67 کروڑ روپےمختص کیے گئے ہیں۔ صحت کے بجٹ میں 32فیصد کا اضافہ کرتے ہوئے 54 ارب روپے رکھے گئے ہیں۔

امن وامان کیلئے بجٹ میں 4 ارب 40 کروڑ کا اضافہ کیا گیاہے، سندھ سرکار نے قیام امن کیلئے اس بار 65 ارب 33 کروڑ روپے مختص کیے ہیں۔ سندھ پولیس کیلئے61ارب42کروڑروپے، رینجرزکیلئے2ارب43کروڑروپے، ایف سی کیلئے1ارب5کروڑروپے،امن وامان سے متعلق ٹریننگ اینڈریسرچ کیلئے1 ارب52کروڑ مختص کیے گئے ہیں۔

سندھ حکومت نے سندھ پولیس میں10ہزار30نئی بھرتیاں کرنے کا بھی اعلان کیا ہے جبکہ 8 اضلاع میں سی سی ٹی وی کیمرےبھی نصب کیے جائیں گے۔

نئے بجٹ میں خدمات پر سیلز ٹیکس میں1فیصدکمی کی تجویز ہے۔خدمات پرسیلزٹیکس15فیصدسے14فیصدکرنےکی تجویزدی گئی ہے جبکہ ٹیلی کمیونیکیشن سیکٹر پرڈیڑھ فیصدٹیکس کم کرنےکی تجویز ہے۔


توانائی کے شعبے کیلئے 16 ارب 50 کروڑ روپے، محکمہ آبپاشی کیلئے 17ارب 68 کروڑ روپے اور شعبہ زراعت کیلئے 5ارب 48کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔ سماء

sind

Tabool ads will show in this div