رمضان المبارک میں سینما گھر بند کرنے کی تجویز دیدی گئی

May 11, 2017

Cinema Ban ISB PKG 10-05

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/05/Cinema-Ban-ISB-PKG-10-05.mp4"][/video]

اسلام آباد: سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے مذہبی امور نے سینما ہاؤسز سحری اور افطاری کے اوقات میں بند رکھنے کی تجویز دے دی ہے۔

تفصیلات کے مطابق لیگی سینیٹر چوہدری تنویر کا کہنا تھا کہ سحری اور افطاری کے اوقات میں سینما گھر تین تین گھنٹے بند رکھے جائیں۔ علماء نےاس فیصلے کو دیر آید درست آید کے مترادف قرار دیا۔

علامہ پروفیسر ظہیر قادری نے کا کہنا تھا کہ اگر سینما ہزاروں میں ہیں تو عوام کروڑوں میں ہیں۔ ہم پھر روزے رکھ کر سڑکوں پر نکلیں گے کہ رمضان المبارک میں فحاشی عریانی بند کی جائے اور ہم ہرصورت یہ بند کروا کررہیں گے لہذا یہ بہت اچھا ہوا کہ بل پیش ہوا۔ علما کا کہنا ہے کہ رمضان جیسے مقدس مہینے میں بے حیائی پرمبنی فلموں کی کوئی گنجائش نہیں۔

مفتی ضمیر ساجد نے کہا کہ ایسی فلمیں جس میں شریعت کی حدود پامال ہوتی ہوں بحیثیت مسلمان ایسی فلمیں ہمیں نہیں دیکھنی چاہیے لیکن اگر ماہ رمضان میں اس کو روکا جائے تو یہ بھلائی کی طرف ایک اچھا قدم ہے۔

علما کے ساتھ ساتھ عوام بھی کمیٹی کی تجویز سے متفق نظر آئے۔ عوام کا کہنا تھا کہ بالکل بند ہونا چاہیے اور بین ہونا چاہیے۔ حکومت کو کوئی جرمانہ لگانا چاہیے اگر اوپن ہوگا تو کوئی ایسا فائن رکھیں تاکہ وہ بالکل کھلے ہی نہ۔

کمیٹی نے احترام رمضان آرڈیننس کی خلاف ورزی کرنے والے ہوٹلز پر پچیس ہزار روپے جرمانے کی بھی تجویز دی ہے۔ سماء

RAMZAN UL MUBARAK

religious affairs

PML-N senator

cinema houses ban

Iftar o Sehar

Tabool ads will show in this div