سب ردی نہیں

   panama5

وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز شریف نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر جاری ایک بیان میں پاناما کو ردی اور اسے دنیا بھر کیلئے کچرے کے مترادف قرار دیا ہے جس پر سوشل میڈیا میں بھونچال آگیا، آئی سی آئی جے سے وابستہ بین الاقوامی صحافیوں اور دیگر شخصیات کی جانب سے انہیں شدید تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

پاناما لیکس میں وزیراعظم نواز شریف، ان کی صاحبزادی مریم نواز، بیٹوں حسین اور حسن نواز کے بیرون ملک اثاثوں کی موجودگی کا انکشاف ہوا تھا، جس پر اپوزیشن جماعتوں پاکستان تحریک انصاف اور جماعت اسلامی نے سپریم کورٹ سے رجوع کرکے تحقیقات کا مطالبہ کیا تھا۔

سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران فریقین کی جانب سے وکلاء نے گھنٹوں دلائل دیئے، ن لیگ کی جانب سے قطری خط سامنے آیا تو پی ٹی آئی نے بھی سیکڑوں صفحات پر مشتمل شواہد پیش کئے، تاہم معزز ججز کی اکثریت ان شواہد سے مطمئن نہیں ہوئی اور دوبارہ تحقیقات کا حکم دیتے ہوئے جے آئی ٹی بنانے کی ہدایت کردی۔

SC Panama JIT Case Isb Pkg 03-05

مریم نواز صاحبہ نے اپنے بیان کے ذریعے سپریم کورٹ میں ہونیوالی درجنوں سماعتوں، معزز ججز کے قیمتی وقت سمیت دیگر امور پر سوالیہ نشان لگادیا، کیوں کہ اسی ردی پر سپریم کورٹ نے تقریباً ایک سال تک سماعت کی، اسی ردی پر عدالت عظمیٰ کی درجنوں سماعتوں کے دوران مسلم لیگ نواز اور جناب وزیراعظم صاحب کے وکلاء دلائل اور شواہد پیش کرتے رہے، اسی ردی پر پی آئی ڈی میں وفاقی وزراء، ن لیگی رہنماؤں نے درجنوں پریس کانفرنسز کیں، اپنی فتح اور مخالفین کی شکست کے دعوے کئے، اسی ردی پر آنیوالے سپریم کورٹ پاکستان کے فیصلے پر وزیراعظم نواز شریف، وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف اور خود مریم نواز صاحبہ جشن مناتی نظر آئیں، اسی ردی میں شامل دیگر ناموں کی تحقیقات کیلئے بھی مسلم لیگ ن کے رہنماء مطالبات کرتے نظر آئے، اسی ردی کی مزید تحقیقات کیلئے ملک کی اعلیٰ ترین عدالت کے معزز ججز نے جے آئی ٹی بنانے کا حکم دیا اور امکان ہے کہ اس بار قابل قبول شہادتیں موصول نہ ہونے پر وزیراعظم کیخلاف بھی فیصلہ آسکتا ہے۔

Panama Collage 3

دوسری جانب اسی ردی پر عالمی سطح پر کئی حکمرانوں کو وضاحتیں پیش کرنا پڑیں، 3 سربراہان مملکت کو عہدے چھوڑنا پڑے، اسی ردی پر کئی سربراہان مملکت کیخلاف تحقیقات جاری ہیں، اسی ردی پر دنیا بھر میں کرپشن کیخلاف عوام احتجاج کررہے ہیں۔ محترمہ مریم نواز کے بیان کو اہمیت دی جائے تو کیا پوری دنیا، تحقیقاتی ادارے، عوامی احتجاج، عدالتی کارروائیاں، الزامات، پاکستان میں فتح اور شکست کے دعوے اور جشن سب ردی کے مترادف ہی سمجھا جائے گا۔

2c

2 ہمارا محترمہ مریم نواز صاحبہ اور ن لیگی رہنماؤں کو مشورہ ہے کہ سیاسی مخالفت کے بجائے معاملے کو اخلاقی نقطہ نظر سے دیکھیں، یقیناً ملزم اور مجرم میں فرق ہوتا ہے تاہم کسی بھی شخص کو اپنے اوپر لگائے گئے الزامات کے غلط ثابت ہونے تک کلین چٹ نہیں دی جاسکتی۔

panamapapers

شریف خاندان اور ن لیگ واقعی پاناما کو ردی ثابت کرنا چاہتی ہے تو انہیں مکمل کلین چٹ حاصل کرنا ہوگی جس میں معزز ججز ان کے پیش کردہ شواہد اور وکلاء کے دلائل کو تسلیم کرتے ہوئے بیرون ملک بنائی گئی جائیدادوں کو قانونی اور کرپشن سے پاک قرار دیں، بصورت دیگر پاکستانی قوم، مقامی و بین الاقوامی صحافی، ماہرین اور عدلیہ یہی سمجھے گی کہ دال میں کچھ تو کالا ضرور ہے۔

 

ICIJ

Panama

Twitt

Tabool ads will show in this div