وزیراعظم کی زیرصدارت اجلاس،جےیوآئی،متحدہ کاتحریک واپس لینےپرغور

Nov 30, -0001

اسٹاف رپورٹ


اسلام آباد: وزیراعظم نواز شریف کی پارلیمانی رہنماؤں کے ساتھ اہم بیٹھک دارالحکومت میں سجی، جس میں جمعیت علماء اسلام اور متحدہ قومی موومنٹ تحریک انصاف کے ارکان کو ڈی سیٹ نہ کرنے کی تحاریک واپس لینے پر راضی نہ ہوئیں،تاہم دونوں جماعتوں نے پارٹی مشاورت کیلئے کل تک کا وقت مانگ لیا۔ وزیراعظم کہتے ہیں ملک مزید محاز آرائی کا متحمل نہیں ہو سکتا، تحریک انصاف نظام کو تسلیم کرے۔

مزید پڑھیں : پارلیمنٹ سے پی ٹی آئی کو ڈی سیٹ کرنے کا معاملہ

تحریک انصاف کے ارکان کی رکنیت ختم کرنے کے معاملے پر وزیراعظم نے پارلیمانی رہنماؤں سے سر جوڑ لئے۔ وزیراعظم کی زیر صدارت اجلاس میں پارلیمانی رہنماؤں نے شرکت کی، اجلاس میں ایم کیو ایم اور جے یو آئی، پی ٹی آئی کو گھر بھیجنے پر بضد تھیں، تاہم وزیراعظم نے محاز آرائی نہ کرنے کا مشورہ دے دیا۔

اجلاس سے خطاب میں وزیراعظم کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف نظام کو تسلیم کرے، ان کے پارلیمنٹ میں رہنے پر اعتراض نہیں، تاہم سڑکوں پر روڈ شو نہیں ہونے چاہئیں، انہوں نے کہا کہ سب کو پارلیمان کی افادیت اور اہمیت کو تسلیم کرنا ہوگا، ملک محاز آرائی کا متحمل نہیں ہو سکتا۔

مزید پڑھیںپی ٹی آئی کو ڈی سیٹ کرنے کا شوشہ کس نے چھوڑا ؟؟

شرکا جے یو آئی اور ایم کیو ایم کو تحاریک واپس لینے پر راضی نہ کرسکے، دونوں جماعتوں کا مؤقف تھا کہ دھرنے کے دوران پی ٹی آئی نے پارلیمنٹ کو گالی دی، انہیں یہاں بیٹھنے کا کوئی حق نہیں، دونوں جماعتوں نے تحاریک کی واپسی پر پارٹی سے مشاورت کیلئے کل تک کا وقت مانگ لیا۔

بیشتر ارکان نے پارلیمنٹ کی بالادستی اور جمہوریت کی مضبوطی کیلئے متفقہ قرارداد لانے کی تجویز دی اور تحریک انصاف سے ایوان میں رہنے کیلئے قرارداد کی غیر مشروط حمایت کرانے کا مشورہ دیا۔ سماءعثمان خان، سما اسلام آباد

Tabool ads will show in this div