امریکہ کی پہلی مسلمان خاتون جج کی پراسرارموت

Apr 13, 2017

sheila1

نیویارک:دوروزقبل لاپتہ ہونے والی امریکہ کی پہلی مسلمان خاتون کی لاش دریائے ہڈسن  سے برآمد ہوئی ہے۔ امریکی حکام کے مطابق نیویارک کی اعلیٰ عدالت کی مسلمان خاتون جج شیلا عبدالسلام کی لاش مین ہٹن میں دریائے ہڈسن کے مغربی کنارے پر تیرتی ہوئی پائی گئی۔ 65 سالہ خاتون جج اپنے خاوند کے ساتھ نیو یارک میں مقیم تھیں اور دو روز سے لاپتہ تھیں۔

امریکی میڈیا کے مطابق خاتون جج کی لاش پربظاہرچوٹ کا کوئی نشان نہیں، ان کی لاش کا پوسٹ مارٹم کیا جائے گا تاکہ موت کی وجہ معلوم کی جا سکے۔ پولیس ترجمان کے مطابق شیلا کے اہلخانہ نے لاش کی شناخت کرلی ہے۔

sheila

واشنگٹن کی رہائشی شیلا عبدالسلام کو 2013 میں اپیل کورٹ کا جج مقررکیا گیا تھا اوروہ پہلی افریقن امریکی خاتون جج تھیں۔ ویب سائٹ کے مطابق شیلا نے کولمبیا لاء اسکول سے گریجویٹ کیا اور بطور استاف اٹارنی ایسٹ بروکلین لیگل سروس سے پیشہ وارانہ زندگی کا آغاز کی۔ شیلا 1993 میں امریکی سپریم کورٹ کی جج منتخب ہوئیں ۔ 2013 میں  نیو یارک کے گورنر نے انہیں اپیل کورٹ کا جج مقرر کیا۔ سماء

found dead

first female Muslim judge

Sheila Abdus-Salaam

Hudson river

Tabool ads will show in this div