دلکش وادی کا حسن ماند پڑنے لگا

Mar 29, 2017

Swat Jungle Pkg 29-03 Ayaz

[video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/03/Swat-Jungle-Pkg-29-03-Ayaz.mp4"][/video]

سوات : جنگلات کي بےدريغ کٹائي جاري ہے، جس سے وادي کا حسن ماند پڑنے لگا ہے، دلکش وادی سوات میں خوبصورتي کے دشمن درخت کاٹ رہے ہيں قدرتي ماحول برباد کررہے ہيں۔

سوات ميں تحصیل کبل کے علاقے توتانوبانڈئی میں بیس ہزار ایکڑ پر جنگلات پھيلے تھے مگر اب چھ ہزارایکڑکا صفایاہوچکا ہے يہ خالي خالي پہاڑ صوبائی حکومت کے بلین ٹری دعووں کا پول کھول رہے ہیں ۔

شہریوں کا کہنا ہے کہ وادی سوات کی خوب صورتی تو جنگل سے ہے اگر جنگل نہیں تو کچھ بھی نہیں ہے پھر۔حکومت کی جانب سے بڑے دعوے تو کئے جارہے ہیں لیکن جنگلات کی حفاظت کے لئے کوئی اقدام نہیں کیا جارہا ہے،درختوں کی کٹائی ہورہی ہے اور سمگلنگ کا سلسلہ جاری ہے حکومت نے ابھی تک یہاں پر سونامی بلین ٹری کے تحت یہاں ایک پودا بھی نہیں لگایا ہے ۔

محکمہ جنگلات کےافسران تسليم کرتے ہيں کہ درختوں کی کٹائی نہيں روک سکے اہلکاروں کے ملوث ہونے کا انکشاف کیا۔

ماہرین کے مطابق جنگلات کی کٹائی نہ روکی گئی توماحولیاتی آلودگی میں اضافہ ہوگا، سونامی بلین ٹری کے دعوے تو اپنی جگہ لیکن سوات میں صورت حال بالکل برعکس ہے، درختوں کی بے دریغ کٹائی سے جنگلات بتدریج ختم ہورہے ہیں ۔ سماء

Sawat

Beautiful

Tabool ads will show in this div