کورال چوک، مشتعل افراد اور پولیس میں جھڑپیں، مظاہرین کا پتھراؤ

اسٹاف رپورٹ
 اسلام آباد :  اسلام آباد کے کورال چوک پر پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں اور پولیس کے درمیان  رات بھر جھڑپیں ہوئیں۔ صبح کا آغاز ہوتے ہی ایکشن پھر شروع ہوگیا۔ مظاہرین پولیس کا حصار توڑ کر ایئرپورٹ کی جانب نکل گئے۔

اسلام آباد کے کورال چوک پر پولیس نے مظاہرین پر چڑھائی کی تو پاکستان عوامی تحریک کے کارکن بھی بپھرے نظر آئے۔ پولیس پر پتھراؤ کے بعد اہلکار سے ڈھال چھین کر فتح کا جشن منایا گیا  ۔ جیسے کوئی قلعہ سر کرلیا ہو۔  اور قیدیوں کو لے جانے والی وین پر تو یوں ہلہ بولا گیا جیسے کچھ ساتھیوں کو چھڑانا مقصود ہو۔

تھانہ کورال پر بھی پتھروں کی بارش کردی گئی۔ اور پھر کالی وردی والوں نے انٹری ماری۔ صرف انٹری ہی نہیں لاٹھی بھی ماری۔ کارکن کنٹرول میں نہ آئے تو شیل نکل آئے۔  لیکن وفاقی پولیس کے بانکے سپاہی آنسو گیس کے شیل بھر کے لائے بھی تو پلاسٹک کے شاپر میں ۔ 

کورال کا علاقہ میدان جنگ بنا رہا۔ آنسو گیس کی شیلنگ۔ اور سڑک سے اٹھتا دھواں۔ ہر طرف سنگ ریزے۔ کسی غریب کی موٹرسائیکل کی شامت بھی آگئی۔ 
آنسو گیس کی شیلنگ سے آنسو بہاتے ۔ سانس بحال کرتے مظاہرین چہرہ چھپاکر ادھر ادھر بھاگتے رہے۔ پولیس کے ڈنڈوں سے بھی کسی کا سر پھٹ گیا۔۔ تو کسی کی ٹانگ اور کمر پر نیل پڑ گئے۔

کورال چوک کے لیے یہ منظر گھنٹہ دو گھنٹے کے نہیں۔ رات بھر یہ ایکشن جاری رہا۔ جب پولیس نے ربڑ کی گولیاں بھی چلائیں۔ اور شیلنگ بھی کی۔ کئی مظاہرین کی پٹائی بھی ہوئی۔ اور پولیس کا کریک ڈاؤن اُس وقت شروع ہوا۔۔ جب مظاہرین نے کورال ہائی وے کے لیے رستہ نہ ملنے پر دھرنا دے دیا تھا۔ سماء 

diet

Tabool ads will show in this div