طیبہ تشدد کیس، انسانی حقوق کے نمائندوں سےاعداد وشمار طلب

SC Tayyaba Case Isb Pkg 25-01

اسلام آباد: طيبہ تشدد کيس میں چيف جسٹس نے استفسار کيا کہ ملازمت کيلئے بچے کہاں سے آتے ہيں، سپريم کورٹ نے انساني حقوق کے نمائندوں سے تين ہفتوں ميں اعدادوشمار طلب کرلئيے ۔

سپریم کورٹ میں طیبہ تشدد کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے سوال اٹھایا کہ کم سن بچوں کو ملازمت پر کون رکھواتا ہے؟ وسیع معاملہ ہے جس میں یہ دیکھنا ہے کہ یہ بچے کدھر سے آتے ہیں، عدالت نےانسانی حقوق کے نمائندوں سے تین ہفتوں میں اعدادوشمار طلب کر لیے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ سمجھ نہیں آتا کہ بچی کے والدین کو وکیل کے پاس کون لے گیا وکیل نے کس طرح والدین سےدستخط کرائے اورجوڈیشل افسر نے بچی حوالے کی ، عدالت عظمیٰ میں ماہین بی بی کی ضمانت پر پھر بحث ہوئی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ماہین بی بی کونئی دفعات کے تحت ضمانت حاصل نہیں ہے، نئی دفعات پرضمانت کا معاملہ متعلقہ عدالت اور پولیس دیکھے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ حیران ہیں قانون میں طیبہ جیسی بچی کیلئے کچھ موجود نہیں، جسٹس عطاء بندیال نے ریمارکس دیے کہ یہ کیسی تفتیش ہے کہ بیانات مکمل ریکارڈ نہیں کئے گئے۔

ڈی آئی جی اسلام آباد پولیس نے بتایا کہ کیس کا مکمل چالان کل جمع کرایا جائے گا طیبہ تشدد کیس کی سماعت ایک ہفتے کیلئے ملتوی کر دی گئی۔ سماء

SCP

Maheen Zaffar

Tayyeba Tortured Case

OSD Judge Bail

Raja Khurram Bail

Additional Session Judged

Tabool ads will show in this div