جنسی ہراساں کرنیکامعاملہ،لب کشائی پرخواتین اینکرز معطل

PTV اسلام آباد : پاکستان ٹیلی وژن نیٹ ورک اسلام آباد کی جانب سے جاری پریس نوٹ کے مطابق دو خواتین اینکرز مس تنزیلہ اور مس یاشفین پر پی ٹی وی کے دروازے بند کردیئے گئے۔

خواتین اینکرزکوجنسی ہراساں کرنیکامعاملہ،پی ٹی وی ڈائریکٹرنیوزپرجرمانہ

سرکاری نشریاتی ادارے پی ٹی وی میں خواتین کو جنسی ہراساں کرنے کا معاملہ مزید سنگین ہوگیا،لب کشائی پر خواتین اینکرز کو انصاف ملنے کے بجائے ادارے کے دروازے بند کردیئے گئے۔  خواتین اینکرز اور دیگر اسٹاف کی جانب سے گھنونئے انکشافات کے بعد پی ٹی وی کے متنازعہ افسر نے دونوں خواتین اینکرز کے خلاف انتقامی کارروائی کا آغاز کردیا۔ IMG-20170124-WA0006 پی ٹی وہ کنٹرولر کرنٹ افیئرز کی جانب سے تازہ احکامات کی روشنی میں نجی ٹی وی کے ٹاک شو میں دونوں خواتین اینکرز کی جانب سے دیئے گئے بیپرز اور ہتک آمیز الزامات کے بعد خواتین اینکرز پر پابندی لگائی گئی ہے، واضح رہے کہ نجی ٹی وی کے ٹاک شو میں دونوں خواتین اینکرز نے ڈرائیکرٹڑ کرنٹ افیئرز کی جانب سے جنسی طور پر ہراساں کرنے اور دھمکیاں دینے کا الزام عائد کیا تھا۔ FotorCreated-31 ترجمان پی ٹی وی کے مطابق دونوں خواتین کی جانب سے دیئے گئے بیان اور الزامات کے باعث ادارے کی ساکھ مجروح ہوئی ہے۔ tashfeen متعلقہ بیان اور الزامات کے بعد پی ٹی وی نیوز کراچی، کوئٹہ، پشاور، لاہور اور ملتان نے دونوں اینکرز کے خلاف ایکشن لیتے ہوئے سچ بولنے کی پاداش میں تادیبی کارروائی کا حکم دے دیا۔ ترجمان کے مطابق کوئی بھی ادارہ اس قسم کے الزامات اور بیانات برداشت نہیں کرسکتا، اس کے باجود کے خواتین کی شکایات پر انکوائری کمیٹی قائم کردی تھی، پھر بھی خواتین کی جانب سے نجی ٹی وی چینل پر ادارے کی ساکھ کو مجروح کیا گیا۔ tweet یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ پی ٹی وی میں خواتین اسٹاف کے ساتھ برے سلوک اور جنسی ہراساں کرنے کا یہ کوئی پہلا واقعہ نہیں ، اس سے قبل بھی کینیڈیئن پلٹ پی ٹی وی کے ڈائریکٹر نیوز اطہر فاروق کے خلاف بھی خواتین ملازموں کی جانب سے لاتعداد شکایات کے بعد ہٹا دیا گیا تھا۔  

athar

مذکورہ ڈائریکٹر کرنٹ افیئر کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ان کے بڑے بڑے سیاسی رہنماؤں سے قریبی تعلقات ہیں، جب کہ پی ٹی وی میں ان کی تعیناتی بھی سیاسی اثرورسوخ کا ساخسانہ ہے۔ سماء

JOURNALISM

MD

CURRENT AFFAIRS

female anchors

Tanzeela

Tabool ads will show in this div