نواز شریف کی بیرون ملک رقم منتقلی کی تفصیلات طلب

panama-case-PM-Nawaz [video width="640" height="360" mp4="https://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/01/Musadiq-Malik-Sc-Isb-16-01.mp4"][/video] اسلام آباد : سپریم کورٹ میں پاناما کیس کی سماعت  ميں وزيراعظم کے وکيل کو پھر سخت سوالات کا سامنا کرنا پڑا، جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیے کہ کیس کا ایک حصہ منی لانڈرنگ سے متعلق بھی ہے، رقوم منتقلی کی تفصیلات تو دینا ہوں گی،۔ وزيراعظم کے وکيل نے کہا کہ  نوازشريف پر ٹیکس چوری کا الزام غلط ہے، بینک ٹرانزکشن کا ریکارڈ موجود ہے، وکیل کا کہنا تھا کہ مریم نواز  اپنے والد کے زیر کفالت نہیں۔ اسلام آباد میں پاناما کے ہنگامے کی آج بھی سماعت ہوئی، وزيراعظم کے وکيل کو آج بھی سخت سوالات کا سامنا رہا، اپنے ریماکس میں چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ کیس کا ایک حصہ منی لانڈرنگ سے متعلق ہے، آپ کو رقوم منتقلي کي تفصيلات دينا ہوں گي۔ SC Panama Hungama Isb Pkg 09-01 وزيراعظم کے وکيل کا کہنا تھا کہ  بینک ٹرانزکشن کا ریکارڈ موجود ہے، ان پر ٹيکس چوري کا الزام غلط ہے، جسٹس اعجاز کا کہنا تھا کہ بغیر تصدیق آپ کی دستاویزات تسلیم کیں تو دوسروں کی بھی ماننا پڑیں گی۔ Panama Case Curtain Raiser Isb Pkg 03-01 مخدوم علی خان نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ کسی تکنیکی نقطے کے پیچھے چھپنے کی کوشش نہیں کروں گا۔ پہلا سوال یہ ہے کیا پاکستان سے کوئی رقم باہر گئی؟ Panama-Papers-2 جسٹس آصف کھوسہ نے کہا کہ اس معاملے کی پہلے بھی تحقیقات ہو چکی ہیں ،تحقیقات میں بعض افراد کے نام بھی سامنے آئے۔ supreme-court-resumes-hearing-of-panama-leaks-case-e10ebe570c0d425d91b688ffc8ac8c63 جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ اسحاق ڈار کا اعترافی بیان بھی سامنے آیا تھا، اعترافی بیان میں کئی لوگوں کے نام بھی تھے، تکنیکی بنیادوں پر منی لانڈرنگ والی تحقیقات مسترد ہوئیں، نیب نے فیصلے کے خلاف کوئی اپیل نہیں کی۔ SC PANAMA TIMELINE ISB PKG 31-12 مخدوم علی خان نے کہا کہ حسین نواز کا نیشنل ٹیکس نمبربھی موجود ہے، بینک کے علاوہ تحائف پر انکم ٹیکس لاگو ہوتا ہے، حسین نواز پر الزام لگایا گیا کہ ٹیکس نہیں دیتے، درخواست گزاروں نے تسلیم کیا کہ تحائف بذریعہ بینکس دیے گئے، تمام بینک ٹرانزیکشنز کا ریکارڈ بھی موجود ہے۔ SHEIKH ON PANAMA SOT 30-11 وزيراعظم کے وکيل نے عدالت کو بتايا کہ عزيزيہ اسٹيل مل دو ہزار پانچ ميں فروخت ہوئي، جس پر جسٹس اعجاز نے سوال کيا کہ دو ہزار پانچ کے بعد حسن نواز کا کیا کاروبار تھا؟ مخدوم علي خان نے کہا کہ حسن نواز کے کاروبار کی تفصیل ان کے وکیل دیں گے۔ بعد ازاں کیس کی سماعت کل تک ملتوی کردی گئی۔ سماء

IMRAN KHAN

MARYAM NAWAZ

Panama leaks

bank Accounts Details

money transfer

PTI vs PMLN

immunity

Tabool ads will show in this div