نواز، شہباز کا استعفیٰ اور گرفتاری ، انقلاب مارچ کا چارٹر آف ڈیماڈ پیش

ویب ایڈیٹر

لاہور : ڈاکٹر علامہ طاہر القادری نے نواز، شہباز سے استعفیی اور انہیں قتل کے الزام میں گرفتار کرنے کا مطالبہ کردیا۔

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر علامہ طاہر القادری نے انقلاب مارچ سے خطاب کرتے ہوئے چارٹر آف ڈیمانڈ پیش کردیا۔

پہلا مطالبہ

نواز شریف اور شہباز شریف فوری استعفیٰ دیں، وزیراعظم نواز شریف اور وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو سانحہ ماڈل ٹاؤن میں شہید افراد کے قتل کے الزام میں گرفتار کیا جائے، ان کے ساتھ بھی وہی سلوک کیا جائے جو ایک عام شہری کے ساتھ ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ لاہور کی مقامی عدالت نے نواز شریف اور شہباز شریف سمیت 21 افراد کیخلاف قتل کا مقدمہ درج کرنے کا حکم دیدیا، شہداء کے ساتھ یہی انصاف ہوگا کہ نواز اور شہباز مستعفی ہوں اور انہیں گرفتار کیا جائے، یہ مطالبات پورے ہونے تک ہم یہاں سے نہیں جائیں گے۔

دوسرا مطالبہ

وفاقی اور پنجاب کابینہ کے ارکان بھی استعفیٰ دیں، وفاقی اور صوبائی حکومتیں فی الفور ختم کی جائیں، اسمبلیاں تحلیل کی جائیں۔

تیسرا مطالبہ

متفقہ طور پر ریفارمز ایجنڈا رکھنے والی قومی حکومت کی تشکیل کی جائے۔

چوتھا مطالبہ

قومی حکومت کے ذریعے کرپشن میں ملوث سیاستدانوں اور سرکاری افسران سمیت ہر شخص کا بے رحم احتساب کیا جائے۔

پانچواں مطالبہ

قومی حکومت کے ذریعے غریبوں کیلئے 10 نکاتی انقلابی ایجنڈا نافذ کیا جائے۔

بے گھر افراد کیلئے گھر، ایسا مکینزم بنے جہاں غریبوں کیلئے مفت علاج کی سہولت میسر ہو۔

قومی حکومت پہلے ماہ میں بجلی، گیس اور پانی کی قیمتیں آدھی، ضروریات زندگی کی قیمتوں میں خاطر خواہ کمی کرے۔

ملک میں عورتوں کو بھی برابری کی بنیاد پر معاشی تحفظ دیا جائے۔

کسی کو بھی عقیدے کی بنیاد پر کافر قرار دینے کا سلسلہ بند ہونا چاہئے۔

فرقہ واریت اور دہشت گردی کا خاتمہ کیا جائے۔

اقلیتوں کو مکمل تحفظ فراہم کیا جائے۔

دہشت گردوں کی مدد کرنے والوں کا بھی احتساب کیا جائے۔

امن اور برداشت کے مضمون کو تعلیمی نصاب میں شامل کیا جائے۔

20 کروڑ آبادی والے ملک میں صرف 4 صوبے ہیں، ملک کو انتظامی طور پر 23 صوبوں میں تقسیم کردیا جائے، فاٹا کو بھی صوبہ بنانا چاہئے۔

اختیارات کی نچلی سطح تک منتقلی ضروری ہے، غریبوں کو ان کے مسائل کا حل اس کی یونین کونسل میں ملنا چاہئے، لوکل باڈیز کا انتخابی نظام بنایا جائے۔

انہوں نے کہا کہ ملک کے کسی سرکاری دفتر میں کرپٹ لوگوں کو نہیں بیٹھنے دیا جائے گا، اربوں روپے کے قرضے لے کر معاف کرانے والوں کو نہیں چھوڑیں گے۔

علامہ طاہر القادری کا کہنا ہے کہ طاقتور اور کمزور کے الگ الگ قانون نہیں چلیں گے، غریبوں کو بھی برابری کی بنیاد پر خوشحالی دینا چاہتے ہیں، قومی حکومت تمام اداروں کو غیر سیاسی کرے گی۔

وہ کہتے ہیں کہ پولیس حکمرانوں کی ذاتی نوکر بنی ہوئی ہے کیا یہ ہی جمہوریت ہے، جمہوریت 5 سال میں ایک بار ووٹ ڈالنے کا نام نہیں، ہم اپنے پرامن انقلاب سے جمہوری اصلاحات اور حقیقی جمہوریت چاہتے ہیں۔

طاہر القادری نے مزید کہا کہ ایف آئی اے، ایئرپورٹ اتھارٹی سے کہتا ہوں کہ نواز اور شہباز شریف سمیت ان 21 افراد کا نام ای سی ایل میں ڈالا جائے، انہیں ملک چھوڑ کر بھاگنے نہ دیا جائے۔

پی اے ٹی ڈاکٹر علامہ طاہر القادری نے انقلاب مارچ کے شرکاء سے سانحہ ماڈل ٹاؤن میں جاں بحق افراد کے قاتلوں سے بدلہ لینے اور ان کے خون سے غداری نہ کرنے کا وعدہ لیا، ان کا کہنا ہے کہ شہداء پوچھتے ہیں کیا قاتل گرفتار ہوں گے۔ سماء

tariff

chapter

Tabool ads will show in this div