میمو گیٹ اسکینڈل،نئے سفیر کیلئے مختلف ناموں پر غور

اسٹاف رپورٹ
اسلام آباد : امریکی فوج کے سابق سربراہ کو لکھے گئے مبینہ میموپرپاکستانی سفیرحسین حقانی سے استعفیٰ لے لیا گیا ہے۔ ان کی جگہ  عفت گردیزی کو واشنگٹن میں قائم مقام سفیرتعینات کردیا گیا۔ وائٹ ہاوس نے حقانی کے استعفٰی کو پاکستان کا اندرونی معاملہ قراردیتے ہوئے سابق سفیرکیلئے نیک خواہشات کا اظہارکیا ہے۔ 

امریکی جنرل مائیک مولن کے نام مبینہ میمو کے معاملے پر پاکستانی سفیر حسین حقانی کوعہدے سے ہاتھ دھونا پڑا۔ جس کے بعد ان کی نائب عفت گردیزی کو واشنگٹن میں قائم مقام پاکستانی سفیربنادیا گیا ہے۔

ادھرامریکا نے حسین حقانی کے استعفیٰ کو پاکستان کا اندرونی معاملہ قراردیا ہے ۔ وائٹ ہاؤس سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکا سابق پاکستانی سفیرکے کام اوران قابلیت کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے  اور ایک دوست کی حیثیت سے ان کیلئے نیک خواہشات بھی رکھتا ہے۔


حسین حقانی کے بعد امریکا میں نئے پاکستانی سفیر کی تعیناتی پربھی غورشروع ہوگیا ہے۔ سفارتی حلقے سیکریٹری خارجہ سلمان بشیراورجلیل عباس کومضبوط امیدوارقراردے رہے ہیں۔

ممکنہ امیدواروں میں جنرل ریٹائرڈ جہانگیرکرامت اورجنرل ریٹائرڈ احسان بھی شامل ہیں ۔ اس سے پہلے پاکستانی نژاد امریکی تاجرمنصوراعجاز سے منسوب میموپراسلام آباد میں اہم اجلاس ہوا جس میں صدرزرداری، وزیراعظم گیلانی، جنرل اشفاق پرویز کیانی اورآئی ایس آئی کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل احمد شجاع پاشا شریک ہوئے۔

حسین حقانی نےعسکری حکام کے تیارکردہ سوالنامہ پر جوابات دیئے۔ اس موقع پرانھوں نے اپنا بلیک بیری اورلیپ ٹاپ تحقیقات کیلئے حوالے کرنے کی بھی پیشکش کی ۔

وزیراعظم ہاؤس کے ترجمان کا کہنا تھا کہ مبینہ میمو کے حوالے سے شفاف تحقیقات کی جائیں گی ۔ ادھرحکومت کومزید مشکلات میں ڈالنے کیلئے اپوزیشن جماعت مسلم لیگ ن نے میمواسکینڈل پرسپریم کورٹ میں جلد پیٹیشن داخل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سماء

پر

famine

baghdad

dollar

wimbledon

Tabool ads will show in this div