تھر کی بھوک مزید تین معصوم کلیاں نگل گئی

Nov 30, -0001

اسٹاف رپورٹ


تھر پارکر  :   تھر کی بنجر زمین مزید تین پھول نگل گئی، تین دن میں اموات کی تعداد چھ ہوگئی ہے، بے حسی کا عالم یہ ہے کہ تھر واسیوں کیلئے بھیجی گئی گندم کی پندرہ ہزاربوریاں تقسیم نہیں ہو سکیں۔ اسپتال کا حال تو اور بھی برا ہے، جہاں درجنوں بچے زیر علاج ہیں لیکن ڈاکٹر صرف ایک ہے۔

تھر واسی پھر پریشان ہیں، حکومت پھر انجان بنی ہوئی ہے، معصوم بچے غذائی قلت کا شکار ہیں، تھر میں جانور بھی بیمار ہیں۔ مٹھی کے واحد سرکاری اسپتال میں ایک انار سو بیمار والی کہانی ہے، اسپتال میں چالیس بچے داخل ہیں لیکن ڈاکٹر صرف ایک طبی عملہ بھی نہ ہونے کے برابر ہے۔

بچے درد سے تڑپ رہے ہیں، صرف قدرت کے رحم وکرم پر ہیں، تین روز میں غذائی قلت کا شکار چھ بچے دم توڑ چکے۔ انسان تو انسان جانور بھی لاغر ہوگئے۔ پانی اور غذائی قلت کے سبب بڑی تعداد میں جانور مرنے لگے ہيں، جانوروں کی باقیات سے تعفن اٹھ رہا ہے۔

تھر واسی گزشتہ برس بھی پانی کی بوند بوند کو ترس گئے تھے اور اس بار بھی گندم سرکاری گوداموں تک تو پہنچ گئی لیکن تقسیم کا عمل تاحال شروع نہ ہوسکا۔ سماء

کی

Inqilab March

Tabool ads will show in this div