بھارت میں انتہاپسندی کی وبا،مسلمان خواتین کی پٹائی

Jul 27, 2016

india women

[video width="640" height="360" mp4="http://i.samaa.tv/wp-content/uploads/sites/11//usr/nfs/sestore3/samaa/vodstore/urdu-digital-library/2016/07/MUSLIM-WOMEN-BEATEN-PKG-27-07-ASIF.mp4"][/video]

نئی دلی: سیکولربھارت پھرہندو انتہا پسندی کی زد میں آگیاہے۔ ریاست مدھیہ پردیش میں دومسلمان خواتین پرگوشت لیجانے کا الزام لگاکرتشدد کیاگیا۔ پولیس حسب روایت خاموش تماشائی بنی رہی۔

بھارت کی ریاست مدھیہ پردیش میں انتہا پسند ہندو ہجوم نے دو مسلمانوں خواتین پرتشدد کرڈالا۔ یہ افسوسناک واقعہ شہرمندسور کے ریلوے اسٹیشن پر پیش آیا۔ہندو ہجوم کا کہنا تھا کہ مسلمان عورتیں گاؤ ماتا کا گوشت بیچنے لیجارہی تھیں۔

مسلمان خواتین پرظلم کے دوران پولیس تماشہ دیکھتی رہی اورجب ہجوم کی بھڑاس نکل گئی توپولیس مظلوم خواتین کوگرفتارکرکے تھانے لے گئی۔پولیس نے خواتین پرالزام لگایا کہ ان کے پاس گوشت بیچنے کا پرمٹ نہیں تھا۔

پولیس نے جب گائے کے مبینہ گوشت کی جانچ کی توپتا چلا کہ گوشت تو بھینس کا تھا۔  سماء

Madhya Pardesh

religious extremism

Tabool ads will show in this div