مقبوضہ کشمیر؛ مجاہد کمانڈر برہان وانی کی شہادت پر مکمل ہڑتال

13615293_523106711206465_2750444951354324877_n

سری نگر: مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے ہاتھوں ممتاز مجاہد کمانڈر برہان مظفر وانی کی شہادت پر ہفتے کے روز پورے مقبوضہ علاقے میں مکمل ہڑتال کی گئی جبکہ کرفیو اور دیگر پابندیوں کے باوجود زبردست احتجاجی مظاہرے کیے گئے۔

برہان مظفر کو جمعہ کی شام ضلع اسلام آ باد کے علاقے کوکر ناگ میں دیگر دو ساتھوں پرویز اور سرتاج کے ہمراہ شہید کر دیا گیا تھا۔

کشمیر میڈیا سروس کے مطابق ہڑتال کی کال کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے مشترکہ طور پر دی تھی۔

کٹھ پتلی انتظامیہ نے احتجاجی مظاہروں کو روکنے کے لیے تمام بڑے قصبوں میں زبردست پابندیاں عائد کر دی ہیں جبکہ حریت رہنماﺅں کو مظاہروں کی قیادت سے روکنے کے لیے گھروں اور تھانوں میں نظر بند کر دیا ہے۔ انتظامیہ نے لوگوں کو تازہ ترین صورت حال کے بارے میں معلومات کے تبادلے سے روکنے کےلیے اہم مقامات پر موبائل فون اور انٹرنیٹ سروسز معطل کر دی ہیں۔ ہڑتال اور مظاہروں کے باعث امرناتھ یاترا کو بھی موخر کر دیا گیا ہے۔

ضلع پلوامہ کے علاقے ترال شریف آباد کا رہائشی 21 سالہ برہان مظفر وانی 2010 میں حزب المجاہدین میں شامل ہوا تھا۔ برہان مقبوضہ علاقے میں عسکریت کو نئی جہت دینے والا سمجھا جاتا تھا۔ ان کے ایک بھائی خالد مظفر کو بھی بھارتی فوجیوں نے ایک سال قبل شہید کیا تھا۔ اپنے بڑے بھائی کی شہادت کے بعد برہان کا کردار اچانک ایک نیا رخ اختیار کر گیا تھا۔

سوشل میڈیا پر اپنے دیگر مجاہد ساتھیوں کے ہمرہ اسکی منفرد تصاویر اور ویڈیوز کے باعث جنوبی کشمیر میں سینکڑوں نوجوان مجاہدین کی صفوں میں شامل ہو گئے۔ برہان کے والد مظفر احمد وانی مقامی ہائر اسکنڈری سکول میں پرنسپل ہیں۔

برہا ن کی شہادت کی خبر سننے کے فوراً بعد ترال، اونتی پورہ، پلوامہ، شوپیاں اور دیگر علاقوں سے لوگ برہان کے گھر کی طرف مارچ کرنے لگے۔ سماء/اے پی پی

SYED ALI GEELANI

Mirwaiz Umar Farooq

Burhan Muzaffar Wani

Tabool ads will show in this div