سندھ اسمبلی میں خواتین ممبران کی جملے بازی

Nov 30, -0001

اسٹاف رپورٹر


کراچی : سندھ اسمبلی میں وزراء نے سرکاری نشستوں پر بیٹھی خواتین کو شور شرابے کا ذمہ دار قرار دیا اور اُنہیں کے جی کی بچی کہا جس سے ایوان کا رنگ ہی تبدیل ہوگیا۔


  سندھ اسمبلی کے اجلاس میں صوبائی وزیر رفیق انجینئر نے فنکشنل لیگ کی رکن اسمبلی نصرت سحر عباسی کو خواتین کی حمایت میں مسلسل بات کرنے پر ٹوکتے ہوئے کہا کہ آپ ایوان میں چلا چلی کر رہی ہیں جس پر نصرت سحر نے احتجاج کرتے ہوئے ایوان سے الفاظ خارج کرنے کا مطالبہ کر دیا۔


 اسمبلی میں پیپلز پارٹی کی ہی رکن اسمبلی نے بڑی سادگی سے یہ کہہ دیا کہ سینما گھروں میں قابل اعتراض فلمیں بارہ اور پندرہ سو روپے کی ٹکٹ پر چلائی جا رہی ہیں جس پر وزیر ایکسائز نے کہا کہ انہوں نے صرف پانچ سو روپے تک کی ٹکٹ پر فلم دیکھی ہے۔ پندرہ سو کی ٹکٹ کا انہیں علم نہیں۔


سندھ اسمبلی کے اجلاس میں کاروکاری واقعات کے خلاف متفقہ قرارداد بھی منظور کر لی گئی۔ سماٴ

میں

کی

سندھ

revolution

Tabool ads will show in this div