دوبارہ ٹیسٹ کرکٹ کھیلنا کسی معجزےسے کم نہیں،محمد عامر

Jul 02, 2016
(FILES) This file photo taken on June 16, 2016 shows Pakistani cricketer Mohammad Amir smiling at an Iftar dinner hosted by the British High Commissioner ahead of the Pakistani team departure to England, in Lahore.
Mohammad Amir can still become the best bowler in the world despite serving a five-year ban for spot-fixing, Pakistan captain Misbah-ul-Haq said Monday. / AFP PHOTO / ARIF ALI / TO GO WITH AFP STORY BY JULIAN GUYER
(FILES) This file photo taken on June 16, 2016 shows Pakistani cricketer Mohammad Amir smiling at an Iftar dinner hosted by the British High Commissioner ahead of the Pakistani team departure to England, in Lahore. Mohammad Amir can still become the best bowler in the world despite serving a five-year ban for spot-fixing, Pakistan captain Misbah-ul-Haq said Monday. / AFP PHOTO / ARIF ALI / TO GO WITH AFP STORY BY JULIAN GUYER
(FILES) This file photo taken on June 16, 2016 shows Pakistani cricketer Mohammad Amir smiling at an Iftar dinner hosted by the British High Commissioner ahead of the Pakistani team departure to England, in Lahore. Mohammad Amir can still become the best bowler in the world despite serving a five-year ban for spot-fixing, Pakistan captain Misbah-ul-Haq said Monday. / AFP PHOTO / ARIF ALI / TO GO WITH AFP STORY BY JULIAN GUYER

سمرسٹ: پاکستان کے مایہ ناز فاسٹ بالر محمد عامر نے کہاہےکہ اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل کے باعث 5 سالہ پابندی کے دوران 3 سال تک کرکٹ کی گیند کوہاتھ نہیں لگایا۔ انھوں نے بتایا کہ دوبارہ ٹیسٹ کرکٹ کھیلنا کسی معجزے سے کم نہیں۔

برطانوی نشریاتی ادارے کو انٹرویو دیتے ہوئے محمد عامر نے بتایا کہ پابندی کے دوران زندگی بہت کٹھن تھی۔ ایسا بھی وقت آیا کہ محسوس ہوا کہ دوبارہ کرکٹ کھیلنا ممکن نہیں ہوگا۔ انھوں نے بتایا کہ وہ بہت اداس تھے کہ بطور پیشہ ور کھلاڑی وہ نہ ہی کرکٹ کی پریکٹس کر سکتے تھے اور نہ ہی کرکٹ کی گیند کو ہاتھ لگا سکتے تھے۔

محمد عامر نے مزید بتایا کہ 5 سال کے دوران کئی تلخ یادیں ہیں۔ مگران یادوں کے تجربات نے انھیں بہت کچھ سکھایا۔ وہ اب اچھا انسان اور بہتر کرکٹر بننا چاہتے ہیں۔

Amir The Hope PKG 27-02

محمد عامر کا کہنا تھاکہ وہ آج بھی سیکھ رہے ہیں۔ کوئی مکمل درست نہیں ہوتا۔ ماضی میں جو ہوا ،وہ ماضی کا حصہ ہے اور اب وہ آگے کی جانب دیکھ رہے ہیں۔ محمد عامر نے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ پاکستان کے لیے بہترین کرکٹ بننا چاہتے ہیں۔ انھوں نے واضح کیا کہ اگر وہ سخت محنت کریں گے تو ان کا ہدف دنیا کا بہترین بالر بننا ہے۔

محمد عامر کا کہنا تھا کہ پاکستان کی دوبارہ نمائندگی کرنا ان کے لیے بہت خاص موقع ہے۔ یہ وہی مقام ہوگا جہاں ان کا کیرئیر آکر رکا تھا۔ وہی ٹیم ،وہی تماشائی ہونگے اور یہ سب ایک خواب کی مانند ہوگا مگر خواب بھی سچ ثابت ہوتے ہیں۔  سماء

tour of england

Tabool ads will show in this div