نوازشریف کاحکومت کواسپرین کامشورہ،بلوچستان کےمسائل پرسیمینارکی تجویز

اسٹاف رپورٹ
کوئٹہ :
نون لیگ کے سربراہ میاں نواز شریف نے حکومت کو سردرد میں معالجین سے رابطے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا کے ذریعے نہیں براہ راست نون لیگ سے بات کی جانی چاہئے تھی۔


جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا دستور اب نہیں چلے گا۔ میاں نواز شریف نے بلوچستان کے مسائل حل کرنے کیلئے اسلام آباد میں تمام جماعتوں کے سیمینارکی تجویز بھی دی۔
 
نواز شریف کراچی کے بعد اب بلوچستان پہنچے ہیں۔ پارٹی کارکنوں نے استقبال کیا اور میاں صاحب گفتگو کئے بغیر بلوچ رہنماوں سے ملاقات کیلئے چلے گئے۔


یہاں خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ماضی میں عوام کے مینڈیٹ کا احترام نہیں کیا گیا۔


اچھی بھلی حکومتوں کا تختہ الٹ دیا گیا۔ ٹھونسے گئے فیصلوں کے اثرات آج پوری قوم بھگت رہی ہے۔ انھوں نے موجودہ حکومت پر بھی غلط فیصلوں کا الزام لگایا اور سردرد میں اسپرین کھانے کا مشورہ دیا۔

نون لیگ کے کئی رہنما تحریک انصاف میں شامل ہوچکے ہیں اور نواز شریف سمجھتے ہیں کہ مسترد افراد آج بھی پارٹیاں تبدیل کر رہے ہیں۔


انھوں نے اس عمل میں حکومت کو بھی ذمے دار قرار دیا۔ بلوچستان میں ٹارگٹ کلنگ بڑا مسئلہ ہے۔


جب کہ لاپتہ افراد کی بازیابی پر بھی بلوچستان حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ نواز شریف نے وفاقی حکومت سے بھی اس بارے میں سوالات کئے ہیں۔

نواز شریف نے بلوچستان پیکج پر بھی تنقید کی اور حکومت سے لوگوں کے زخموں پر مرہم لگانے کا مطالبہ کیا۔


انھوں نے بلوچ رہنماوں سے وعدہ کیا کہ اگر انھیں  مرکز میں ملک کی خدمت کا موقع ملا تو بلوچستان کی خدمت ضرور کی جائے گی۔ سماء

disabled

Tabool ads will show in this div