پاکستانی حکام کو اسامہ کی موجودگی کاعلم نہیں تھا،امریکی سفارتخانہ

Nov 30, -0001

اسٹاف رپورٹ
اسلام آباد : امریکا نے ایک بار پھر واضح کیا ہے کہ پاکستانی حکام کو ایبٹ آباد میں اسامہ کی موجودگی کا علم نہیں تھا۔


پاکستان سے تعلقات کی بہتری کے لیے کوششیں جاری ہیں۔ میاں افتخار حسین کہتے ہیں کہ پاکستان میں کسی بھی ملک کی مداخلت قبول نہیں۔

اسلام آباد میں امریکی سفارت خانے کے ترجمان کی جانب سے وزیر دفاع لیون پنیٹا کے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ لیون پنیٹا نے پاکستان میں اسامہ کے سپورٹنگ نیٹ ورک کی بات کی تھی۔ یہ نہیں کہا تھا کہ اسامہ وہاں حکومت پاکستان کی مرضی سے ایبٹ آباد میں رہائش پذیر تھے۔

اسامہ کی موجودگی پر پاکستان کی حمایت کے ثبوت نہیں ملے ہیں۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ ایبٹ آباد آپریشن کے بعد پاک امریکا تعلقات میں بہتری کے لیے وزیر دفاع لیون پنیٹا اور دیگر امریکی حکام کوشاں ہیں۔

ادھر پشاور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اے این پی کے رہنما اور صوبائی وزیر اطلاعات میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ ڈاکٹر شکیل کا کردار اگر ملک کے خلاف ہو تو اس کے ساتھ تعاون نہیں کیا جا سکتا۔ پاکستان میں کسی بھی ملک کی مداخلت کو قبول نہیں کریں گے۔ ملک کا سیاسی درجہ حرارت کم ہو رہا ہے جو اچھی بات ہے۔

میاں افتخار حسین کا کہنا تھا کہ قبائلی علاقوں میں عوام کی مرضی کے مطابق فیصلے کیے جائیں گے۔ سینیٹ کے انتخابات اپنے وقت پر ہوں گے۔ سماء/ایجنسیز

کی

کو

اسامہ

war

law

حکام

relationships

Tabool ads will show in this div