عمران خان کا تمام اسمبلیوں سے استعفے دینے کا اعلان

پارلیمانی پارٹی سے مشاورت کرکے تاریخ کااعلان کریں گے، سابق وزیراعظم

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے تمام اسمبلیوں سے استعفوں کا اعلان کردیا۔

راولپنڈی میں جلسہ عام سے خطاب کے دوران عمران خان نے کہا کہ لاہور سے روانہ ہونے لگا تو دو باتیں کہی گئیں، ایک تو یہ ہے میری ٹانگ کی حالت ابھی ٹھیک نہیں اور دوسری بات یہ ہے مجھے قتل کرنے کی کوشش کرنے والے 3 مجرم اب بھی اپنے عہدوں پر موجود ہیں، اس لئے میری جان کو خطرہ ہے۔

عمران خان نے کہا کہ میری ٹانگ ٹھیک ہونے میں مزید 3 مہینے لگیں گے، فائرنگ سے میں گرا تو اوپر سے اور بھی گولیاں گزریں، جب تک اللہ کی مرضی نہیں ہوگی کوئی کسی کو نہیں مار سکتا۔ اللہ کی شان ہے کہ میرے ٹرک میں 12 لوگوں کو گولیاں لگیں لیکن سب ہی بچ گئے۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ خوف بڑے انسان کو چھوٹا بنادیتا ہے، یہ قوم کو غلام بنادیتا ہے، 26 سال کی سیاست میں مجھے ذلیل کرنے کی بہت کوشش کی، کوئی موقع نہیں چھوڑا کہ کسی طرح عمران خان کو ذلیل کریں کیونکہ میں انہیں چور کہتا ہوں، عزت اللہ کے ہاتھ میں ہے ، کوئی آپ کو ذلیل نہیں کرسکتا۔

عمران خان نے کہا کہ لوگ اپنی نوکریاں بچانے کے لئے اپنے افسران کے کہن ے پر غلط کام کرتے ہیں کیونکہ ان میں یہ ایمان نہیں کہ رزق اللہ دیتا ہے، صرف آزاد لوگ بڑے کام کرتے ہیں، آزاد قوم اوپر جاتی ہے۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ مجھے موت کی فکر نہیں تھی مگر میری ٹانگ نے میری مشکلات بڑھا دیں، آج قوم اہم موڑ پرکھڑی ہے، اللہ نے ہمیں پرت دیئے ہیں ہمارا مستقبل یہ نہیں کہ ہم چیونٹیوں کی رینگیں، جو اوپر آئے اور فیصلہ کرے کہ یہ چور ہیں، حکومت گرادے ، اگلے دن پھر بند کمروں میں فیصلہ ہو کہ ہم نے ان کو این آر او دے دیا ہے ، یہ پاک ہوگئے ہیں، پھر ان کو نکالیں اور پھر ان کو این آر او دے دیںقوم اگر اس ظلم اور ناانصافی کو تسلیم کرتی ہے تو قوم اور بھیڑ بکریوں میں کوئی فرق نہیں۔

عمران خان نے کہا کہ انسانوں کے معاشرے میں انصاف ہوتا ہے، پاکستان ایک عظیم ملک نہیں بنا تواس کی وجہ یہ ہے کہ ہمارے ملک میں کبھی قانون کی حکمرانی نہیں آئی۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ غریب ملکوں میں صرف چھوٹا چور جیل جاتا ہے، وہاں کے وزیراعظم پیسہ چوری کر کے ملک سے باہر لے جاتے ہیں، 2 خاندانوں نے 30 سال ملک پر حکومت کی لیکن اداروں کو مضبوط نہیں کیا، دونوں خاندانوں نے اپنی کرپشن کے لئے اداروں کو کمزور کیا، انہیں پتہ تھا ادارے مضبوط ہوئے تو یہ کرپشن نہیں کرپائیں گے۔

عمران خان نے کہا کہ 2018 میں انہوں نے ملک کا دیوالیہ نکالا، ہم نے ملک سنبھالا تو بیرون ملک جا کر دوست ممالک سے پیسے لئے، دوست ممالک سے پیسے مانگنے میں شرم محسوس ہوتی تھی، دوست ممالک سے پیسے مانگنے میں شرم محسوس ہوتی تھی۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ہماری حکومت میں 3 بڑے ڈیمز پر کام شروع کیا گیا، ہم نے 50 سال بعد ملک میں ڈیمز بنانا شروع کیے۔

عمران خان نے کہا کہ ساڑھے 3 سال میں ایک جگہ ناکام ہوا، میں طاقتور کو قانون کے نیچے نہیں لا سکا،جن پر کرپشن کیسز تھے انہیں قانون کے نیچے لانے کی بہت کوشش کی، نیب میرے ماتحت نہیں اسٹیبلشمنٹ کے ماتحت تھی، جن کے پاس کنٹرول تھا وہ حکم نہیں دے رہے تھے، مجھے کہا جاتا تھا احتساب کو بھول جائیں، معیشت پر توجہ دیں، یہ بھی کہا گیا کہ نیب کا قانون بدل دیں۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ بار بار سنتے ہیں سائفر ایک ڈراما تھا، جو بیرونی سازش کا حصہ تھے انہوں نے سائفر کو ڈراما قرار دیا، یہ کہنا کہ یہ ڈراما تھا یہ ملک کی توہین ہے۔

موجودہ حکومت پر تنقید کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ 7 مہینوں میں امپورٹڈ حکومت نے ملک کادیوالیہ نکال دیا، 7 مہینے میں اشیائے خورونوش کی قیمتیں 100فیصد بڑھی ہیں، 88 فیصد سرمایہ کاروں کو حکومت پر کوئی اعتماد نہیں ہے۔

عمران خان نے کہا کہ ایف آئی اے میں اپنا آدمی بٹھا کر سارے کیسز معاف کروا لیے گئے، نیب میں اپنا آدمی بٹھا کر وہاں سے بھی کیسز معاف کروا لیے، جو لوگ جیل میں ہیں ان کا قصور صرف یہ ہے کہ وہ غریب ہیں۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ بزرگ سیاسی کارکنوں، سوشل میڈیا ایکٹیوسٹ اور صحافیوں پر تشدد کیا گیا۔ جن کی ذمہ داری ہمارے بنیادی حقوق کی ذمہ داری ہے ، وہ سوئے تھے، کسی نے کچھ نہیں کیا، اس کے بعد اسلام آباد میں ایک خاص آدمی نے ظلم کیا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ وزیر آباد میں معظم کو گولی اس شوٹر نے نہیں ماری جس نے ہم پر فائرنگ کی، وہاں 3 بندوق والے تھے، ایک وہ جس نے ہم پر فائرنگ کی، ایک وہ جس نے سامنے سے گولیاں چلائیں جو ہمارے اوپر سے نکل گئیں اور تیسرا وہ جسے مجھ پر فائرنگ کرنے والے کو قتل کرنا تھا۔ جس طرح لیاقت علی خان کے قاتل کو وہیں قتل کردیا گیا تاکہ وہ اس سازش کے بارے میں کچھ نہ بولے لیکن گولی معظم مرحوم کو لگ گئی۔

جلسے سے خطاب کے دوران عمران خان نے مزید کہا کہ حکومت گرانے کے بعد اور زیادہ لوگ ہمارے ساتھ آ گئے، جتنے ضمنی الیکشن ہوئے قوم نے بار بار پیغام دیا کہ یہ امپورٹڈ حکومت ہمیں قبول نہیں، قوم کی آواز سننے کی بجائے ہم پر تشدد شروع ہو گیا۔

عمران خان نے کہا کہ ہمارے ادارے پرانی غلطیوں سے کیوں نہیں سیکھتے، جو غلطیوں سے سیکھتے ہیں وہی ترقی کرتے ہیں، مشرقی پاکستان میں جو کچھ ہوا مجھے یاد ہے۔ ہم نے پاکستان کی سب سے بڑی جماعت کے ساتھ انصاف نہیں کیا، ہم نے طاقت استعمال کرکے من مانی کی تو ملک ٹوٹ گیا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ ہمیں کمزور کرنے کا ہر حربہ استعمال کیا گیا، پنجاب میں ہماری حکومت ہے لیکن ایف آئی آر نہیں کٹوا سکے، ہم نے ایف آئی آر کٹوانے کی کوشش کی نہیں کٹوا سکے، پولیس افسر کہتا ہے کہ مجھے ہٹا کر کسی دوسرے کو بٹھادیں میں یہ کام نہیں کرسکتا۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ جب تک طاقتور قانون کے نیچے نہیں آئے گا، ادارے آئین کی حد میں رہ کام نہیں کریں گے، ادارے اپنی ذمہ داریاں پوری نہیں کریں گے، میرا پاکستان اور میری فوج ہے، اگر فوج مضبوط نہیں ہوگی تو دیکھ لیں مسلمان ملکوں میں کیا حالات ہیں، میں وہ نہیں کہ اپنے کاروبار کا سیزن لگانے ملک میں آتے ہیں، یہ غیر ملکی قبضہ گروپ ہے، میرا جینا مرنا پاکستان میں ہے، خون کے آخری قطرے تک اس ملک کے لئے لڑوں گا۔

عمران خان نے کہا کہ اس ملک کی تاریخ گواہی دے گی کہ عمران خان ملک کے لئے آخری وقت تک لڑتا رہا، تاریخ اس کی طرف بھی دیکھ رہی ہے جس کے اثاثوں میں اربوں روپے کا اضافہ ہوا اور پاکستان کے عوام کے حقوق کو روندا، تاریخ اس کی طرف دیکھ رہی ہے کہ اس نے ملک کو فائدہ دیا یا نقصان۔

عمران خان نے کہا کہ عوام کا سمندر ہے لوگ ابھی بھی سڑکوں پر پھنسے ہوئے ہیں، فیصلہ کیا تھا کہ اسلام آباد کی طرف نکلیں گے، اگر لاکھوں لوگ اسلام آباد کی طرف نکل جائیں توانہیں کوئی نہیں روک سکتا، میں نے ساری سیاست قانون و آئین کے اندر کی ہے، اگر یہاں توڑ پھوڑ شروع ہوئی تو سب کے ہاتھ سے کھیل نکل جائے گا۔

عمران خان نے اسلام آباد نہ جانے اور تمام اسمبلیوں سے استعفے دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اسمبلیوں سے استفعوں کی تاریخ کا اعلان پارلیمانی پارٹی سےمشاورت کرکے کیا جائے گا۔

جلسے میں شرکت پرعوام کا شکریہ

پاکستان تحریک انصاف کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے جلسے سے خطاب کے دوران کہا کہ جلسے میں شرکت کرنے پر عوام کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ عمران خان اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر آج راولپنڈی پہنچے ہیں، عمران خان کو اقتدار نہیں قوم کا اعتماد چاہیے،ایک خودمختار قوم بننے کے لئے ہمیں اس کرپٹ نظام کو ختم کرنا ہوگا۔

غلامی نامنظور

جلسے سے خطاب کے دوران اسد عمر نے کہا کہ پاکستان ایک تاریخی موڑ پر پہنچ گیا ہے، ہمارے پاس 2 راستے ہیں، ایک ماضی کا اور دوسرا حقیقی آزادی کا۔ ماضی کاراستہ وہ جہاں ملک کے فیصلے ملک سے باہر ہوتے ہیں اور آزادی کا راستہ امن ، خود داری اور خوشحالی کا ہے، ہمیں فیصلہ کرنا ہے کہ کس راستے پر چلنا ہے۔

اسد عمر نے کہا کہ پاکستان کے عوام نے فیصلہ کر لیا ہے کہ غلامی نامنظور ہے اور یہ قوم کے سامنے سر جھکانے کے لیے تیار نہیں ہے۔

اسلحے کی نمائش پر پابندی

دوسری جانب اسلام آباد کی انتظامیہ نے وفاقی دارالحکومت میں اسلحہ کے نمائش کرنے پر پابندی میں 2 ماہ کی توسیع کا اعلان کر دیا۔

واضح رہے کہ یہ اعلان ایک ایسے وقت میں کیا گیا ہے کہ جب پاکستان تحریک انصاف آج 26 نومبر بروز ہفتے کو راولپنڈی میں بڑا پاور شو کرنے جا رہی ہے۔ اسی دوران وزارت داخلہ نے بتایا تھا کہ لانگ مارچ کے دوران ممکنہ طور پر حملے کا خدشہ ہے۔

رانا ثنا اللہ سمیت دیگر حکام کہہ چکے ہیں کہ پی ٹی آئی کے علی امین گنڈا پور سمیت دیگر لوگ آتشیں اسلحے کے ساتھ اسلام آباد آ رہے ہیں۔ جن کی تردید پی ٹی آئی رہنماؤں نے واضح طور پر کر دی ہے۔

آتشیں اسلحے کی اطلاعات کے بعد وفاقی دارالحکومت کی انتظامیہ نے آتشیں اسلحہ رکھنے یا ان کی نمائش پر 2 ماہ کی مزید پابندی لگا دی ہے۔ یہ پابندی پہلے ہی نافذ تھی تاہم اس میں اضافہ کا اعلان کیا گیا ہے۔

اسلام آباد انتظامیہ کا کہنا ہے کہ فیصلے کا مقصد امن و امان کویقینی بنانا ، انسانی جان کو محفوظ رکھنا شہریوں کو خوف و ہراس سے بچانا ہے۔

اسٹیج کی تیاری

پی ٹی آئی کے جلسے کیلئے اسٹیج سکستھ روڈ فلائی اوور پر تیار کیا گیا ہے۔ سکستھ روڈ فلائی اوور سے چاندنی چوک تک پنڈال ہوگا۔

سوا کلو میٹر طویل پنڈال تین حصوں میں قائم کیا جائے گا۔ اسٹیج کا پہلا حصہ قائدین کے لیے مختص کیا گیا ہے۔ دوسرا حصہ اسٹیج سے 30 فٹ فاصلے پر خواتین شرکاء اور تیسرا حصہ کارکنوں کے لیے ہوگا۔

IMRAN KHAN

RANA SANAULLAH

RAWALPINDI JALSA

PTI HAQIQI AZADI MARCH

Tabool ads will show in this div