عمران خان کی نااہلی کی درخواست، قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے پر فیصلہ محفوظ

آرڈر پاس کریں گے ایسے کیس کا فورم کیا ہونا چاہیئے ، چیف جسٹس

اسلام آباد ہائی کورٹ میں عمران خان کی مبینہ بیٹی کو کاغذات نامزدگی میں ظاہر نہ کرنے پر نااہلی کے کیس کی سماعت ہوئی۔ دوران سماعت چیف جسٹس نے فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے کہا ہم آرڈر پاس کریں گے کہ ایسے کیس کا فورم کیا ہونا چاہیئے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں آج بروز جمعہ 24 نومبر کو عمران خان کی مبینہ بیٹی کو کاغذات نامزدگی میں ظاہر نہ کرنے پر نااہلی کے کیس کی سماعت ہوئی۔

سماعت چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے کی۔ سماعت کے آغاز میں چیف جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ ماضی میں دو متضاد آرا رہیں کہ اس کا فورم الیکشن کمیشن ہے یا ہائی کورٹ ؟۔

انہوں نے مزید کہا کہ فیصل واوڈا کیس میں ہم نے معاملہ، الیکشن کمیشن کوبھیجا تھا، بہت سارے کیس لاز میں دونوں سائیڈز کی آرا ہیں، سابق چیف جسٹس ثاقب نثار اور جسٹس اعجاز الاحسن کے فیصلے بھی موجود ہیں۔

جسٹس عامر فاروق کا مزید کہنا تھا کہ ہائی کورٹ نے اگر نااہلی کا آرڈر دینا ہے تو کس بنیاد پر دے گی؟ اگر کوئی بیان حلفی غلط ثابت ہو تو بندہ صادق اور امین نہیں رہتا، نااہلی کی مدت کےتعین کا معاملہ سپریم کورٹ میں بھی ہے، پانچ سال کی نااہلی تو اسمبلی کی جاری مدت کیلئے ہوتی ہے ، اور اس اسمبلی سے عمران خان خود استعفی دے چکے۔

عدالت کی جانب سے کیس ہائیکورٹ میں قابل سماعت ہونے یا ںہ ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا گیا۔

IMRAN KHAN

Islamabad High Court (IHC)

Tabool ads will show in this div