اسلام آباد میں اتائیوں کی زيرنگرانی چلنے والے 100 سے زائد اسپتال سیل، مقدمات درج

ہیلتھ کیئر ریگولیٹری اتھارٹی نے 318 پرائیویٹ کلینکس اور لیبارٹریاں بھی بند کردی

اسلام آباد میں صرف ایک ہفتے کے دوران ہیلتھ کیئر ریگولیٹری اتھارٹی نے اتائیوں کی زيرنگرانی چلنے والے 111 اسپتال سِیل کر دیے۔

ملک کے دور اُفتادہ علاقوں کی طرح وفاقی دارالحکومت میں بھی شہری اتائیوں کے رحم و کرم پر ہیں جہاں نجی اسپتالوں اور کلینکس کے نام پر سینکڑوں خود ساختہ ڈاکٹر شہریوں کی زندگی سے کھیلنے میں مصروف ہیں۔

ہیلتھ کئیر ریگولیٹری اتھارٹی نے ایک ہفتے میں اتائیوں کی زیرنگرانی چلنے والے 111 اسپتال اور کلینکس سیل کردیے۔ دستاویزات کے مطابق ہیلتھ کئیر ریگولیٹری اتھارٹی نے چند ماہ کے دوران، لیبارٹریوں اور اسپتالوں پر جرمانے عائد کئے گئے۔ 318 نجی کلینکس اور لیبارٹریوں کو بھی سِیل کر دیا گیا۔

سی ای او اسلام آباد ہیلتھ کئیر ریگولیٹری اتھارٹی قائد سعید کا کہنا ہے کہ اتائیت پاکستان کا سنگین مسئلہ ہے، اسلام آباد کے آس پاس کے علاقوں میں جہاں کئی سو اتائی ڈاکٹرز کو بند کیا ہے اور جنہوں نے دوبارہ کھولا ہے ان کے خلاف ایف آئی آر درج کروائی ہیں تا کہ پولیس ان کو پکڑ کر جیل میں ڈالے۔

آئی ایچ آر اے کی کارروائیوں میں 205 لیبارٹریوں اور نجی اسپتالوں کی سروسز معطل بھی کی گئی ہیں۔ حکام کا کہنا ہے کہ اسپتال ، لیبارٹری یا کلینک چلانے کے لئے طے شدہ معیار کی کوئی خلاف ورزی برداشت نہیں کی جائے گی۔

Healthcare Regulatory Authority

Tabool ads will show in this div