ہاتھوں سے مجسمے بنانے والے کراچی کے فنکار

شہر میں صرف 3 یا 4 لوگ اس کام کو جاری رکھے ہوئے ہیں، مجسمہ ساز محمد اعظم

ہاتھوں سے مجسمے بنانے کا فن صدیوں پرانا ہے لیکن وقت گزرنے کے ساتھ اب اس کے کاریگر کم ہوتے جارہے ہیں، کراچی میں ہاتھوں سے مجسمے بنانے والے فنکار محمد اعظم اپنے کام کے کم معاوضوں کی وجہ سے مایوس دکھائی دیتے ہیں، انکا کہنا ہے کہ اس وقت صورتحال یہ ہے کہ مہینے کے 30 ہزار روپے کمانا بھی مشکل ہوچکا، محمد اعظم سیمنٹ، فائبر اور پلاسٹر آف پیرس سے جانوروں اور پرندوں کے مجسمے بناتے ہیں، انکے گاہکوں میں زیادہ تر امیر افراد شامل ہیں جو اپنے بنگلوں اور فارم ہاوسز کیلئے یہاں سے اشیاء لیکر جاتے ہیں، انہوں نے بتایا کہ وہ کراچی میں صرف تین یا چار لوگوں کو جانتے ہیں جو اس کام کو جاری رکھے ہوئے ہیں۔ مزید جانتے ہیں شایان سلیم کی اس رپورٹ میں:

Karachi sculpture artist

pakistani sculpture artist

Tabool ads will show in this div