نومبر میں تقرری آئین اور قانون کے مطابق ہوگی،خواجہ آصف

فرح خان کے کیسز تو پنجاب حکومت نے ختم کیے ہیں،خواجہ
<p>فائل فوٹو</p>

فائل فوٹو

وزیر دفاع خواجہ آصف نے تمام افواہوں اور مفروضوں کا دم توڑتے ہوئے کہا ہے کہ نومبر میں تقرری آئین اور قانون کے مطابق ہوگی۔ انشا اللہ نومبر بھی خیر خیریت سے گزر جائے گا۔

اسلام آباد میں آج بروز بدھ 5 اکتوبر کو اہم پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ 2 روز قبل عمران خان نے ٹیکسلا میں دوبارہ پاک فوج سے متعلق باتیں کیں۔ لیک ہونے والی آڈیو میں کہتے ہیں امریکا کا نام نہیں لینا، منٹس تبدیل کرنے ہیں، سازش کا جھوٹ ساری قوم کے سامنے آچکا ہے۔ آڈیو لیک کے بعد عمران خان کو تھوڑی شرم آنی چاہیے تھی۔ جھوٹ کو تواتر کے ساتھ بول کر سچ ثابت کرنے کی کوشش کی گئی۔

نیا آرمی چیف کون ہوگا

نئے آرمی چیف کی تعیناتی پر خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ آرمی چیف کی تقرری کا پراسیس ماہ رواں کےآخر یا نومبر کے شروع میں ہوگا، سبکدوش چیف کواتنا وقت ملنا چاہئیے کہ وہ احترام کے ساتھ اپنے جوانوں سے انٹرایکشن جاری رکھ سکے، عمران خان کو ابھی کچھ ہفتے اور تڑپنے دیں۔

آرمی چیف کے دورہ امریکا سے متعلق سوال پر ان کا کہنا تھا کہ آرمی چیف کے بیان سے ابہام دور ہوا ہے، تاہم آرمی چیف کے ساتھ دورے میں کون کون ہے مجھے علم نہیں، آرمی چیف کون ہوگا؟ اس کا فیصلہ بھی ابھی نہیں ہوا، روایت کے مطابق پانچ افراد کا نام جاتا ہے۔ پانچ میں سے کسی کو بھی تعینات کیا جاسکتا ہے، پانچ نمبر سے باہر سے بھی ماضی میں لوگ تعینات کئے گئے، سب تھری اسٹارز جنرل اس کے لئے اہل ہیں۔

سابق وزیراعظم پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے یہ بھی کہا کہ عمران خان نے دھمکی آمیز لہجے میں باتیں کیں۔ عدم اعتماد کے ذریعے چور حکومت کو ہٹایا۔ جب چور حکمران بن جائیں تو اس کی حفاظت کسی کی ذمہ داری نہیں۔ ملک کے حالات اس ایک شخص نے داؤ پر لگا دیئے ہیں، ہمارے فوجی ملک کی حفاظت کیلئے جانیں قربان کر رہے ہیں۔ شمالی علاقوں میں آج بھی دہشت گردی کی فضا بنی ہوئی ہے۔

وزیر دفاع نے کہا کہ پاکستان کے ادارے قانون و آئین کے تابع ہیں۔ کسی شخص کی حفاظت کیلئے مامور نہیں ہیں۔ کسی ملک کی فوج نے اتنی قربانیاں نہیں دیں جتنی پاک فوج نے دیں۔ ادارے سیاست میں نیوٹرل ہوئے ہیں تو قوم ان کے ساتھ کھڑی ہے۔

سائفر سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ سائفر کی کاپی دفتر خارجہ میں ہے تو جو تمہارے پاس تھی وہ کہاں گئی؟ یہ وہ شخص ہے جو محسنوں کو گالی دیتا ہے جو ہاتھ کھلاتا ہے اسی کو گالی دیتا ہے۔ ایسے لوگ ملک کے وزیراعظم رہے ہیں یہ بات لمحہ فکریہ ہے۔ بند کمروں میں پاؤں پکڑتا ہے اور جلسوں میں بھڑکیں مارتا ہے۔ فرح خان کے کیسز تو پنجاب حکومت نے ختم کیے ہیں۔ ہمارا کون سا کیس معاف ہوا ہے کوئی ایک کیس بتادیں؟ پروگرام بنایا ہوا تھا کہ 5 سال پورے کرنے ہیں، اور اگلے 5سال بھی لینے ہیں۔ اقتدار کی ہوس نے عمران خان کو پاگل کردیا ہے۔

IMRAN KHAN

KHAWAJA ASIF

DEFENCE MINISTER

COAS BAJWA

ARMY CHIEF EXTENSION

Tabool ads will show in this div