کوہاٹ میں بچے پر بدترین تشدد، مدرسے کے 3 معلمین گرفتار

بچے کو زنجیروں میں باندھا جاتا تھا، بھاگ کر جان بچائی

کوہاٹ کے ایک مدرسہ میں طالبعلم پر تشدد کرنیوالے 3 معلمین کو پولیس نے گرفتار کرلیا۔ زنجیروں سے بندھا طالبعلم مدرسے سے بھاگ کر سڑک پر آکر بیٹھ گیا تھا، جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی تھی۔

کوہاٹ میں مدرسے کے کمسن طالبعلم کی ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی جس میں 9 سالہ لڑکا روتا ہوا نظر آرہا تھا، اس نے بتایا کہ وہ مقامی مدرسے سے بھاگ کر آیا ہے۔

پشتو زبان میں بات کرتے ہوئے بچے کا کہنا تھا کہ اس کو 3 معلیمین تشدد کا نشانہ بناتے تھے اور آج وہ بہت مشکل سے مدرسے سے بھاگ کر نکل آیا۔

ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے بچے کے پاؤں میں بندھی زنجیر کو تالا بھی لگایا گیا تھا۔

ایک شہری نے بچے کی ویڈیو بنا کر سوشل میڈیا پر وائرل کی، جس پر ڈی پی او کوہاٹ شفیع اللہ گنڈا پور نے ایکشن لیتے ہوئے پولیس تھانہ صدر کو ملزمان کیخلاف فوری کارروائی کا حکم دیا تھا۔

تھانہ صدر کوہاٹ کی پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے بچے کو تحویل میں لے لیا اور مقامی مدرسے کے 3 معلمین کفایت حسین، حسن کمال اور ماجد خان کو گرفتار کرلیا، جن کیخلاف تشدد کا مقدمہ درج کرلیا گیا۔

دوسری جانب بچے کے بھائی کا مؤقف ہے کہ ان کو والد نے خود زنجیر سے باندھا تھا کیونکہ اس کا بھائی مدرسے میں پڑھنا نہیں چاہتا تھا۔

پاکستان

child Torture

KOHAT ATTACK

Tabool ads will show in this div