30لاکھ بچوں کےوبائی امراض سےمتاثرہونیکا خدشہ ہے،وزیراعظم

سیلاب سے 30 ارب ڈالر کا نقصان ہوا۔
<p>امریکی نشریاتی ادارے کو دیئے گئے انٹرویو کی ویڈیو سے لیا گیا عکس</p>

امریکی نشریاتی ادارے کو دیئے گئے انٹرویو کی ویڈیو سے لیا گیا عکس

وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا ہے کہ حالیہ سیلاب اور بارشوں سے پاکستان کا ایک تہائی حصہ ڈوب گیا ہے، اس مشکل وقت میں 30 لاکھ بچوں کے وبائی امراض سے متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔ 400 بچوں سمیت 1300 اموات ہوئی ہیں۔

امریکی ادارے بلوم برگ کو دیئے گئے انٹرویو میں پاکستان کے وزیراعظم میاں محمد شہباز شریف نے کہا کہ کاربن کے پھیلاؤ میں پاکستان کا کردار 0.8 فیصد ہے، تاہم اس کے باوجود پاکستان نے دگنی قیمت ادا کی ہے۔ پورا ملک سمندر کا منظر پیش کر رہا ہے، پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں سے شدید متاثر ہوا ہے، سیلاب کے بعد پانی سے وبائی امراض پھیل رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سیلاب سے 3 کروڑ سے زائد لوگ بے گھر ہوگئے، 400 بچوں سمیت 1300 اموات ہوئیں، ملک کا ایک تہائی حصہ پانی میں ڈوب گیا ہے۔ اس وقت ملک کو اتحاد اور مصالحت کی ضرورت ہے۔

وزیراعظم نے یہ بھی کہا کہ پاکستان میں بحالی کے لیے عالمی دنیا کو ہمارے ساتھ کھڑا ہونا ہوگا، پاکستان ایک عالمی سانحہ کے کنارے کھڑا ہے۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ ہم نے سخت شرائط پر آئی ایم ایف سے معاہدہ کیا، تباہ کاریوں اور بحالی کے کاموں میں ادائیگیاں بہت مشکل ہے، دنیا نے جو ہماری مدد کی بہت کم ہے، اگلے دو ماہ میں پاکستان پر قرضوں کی ذمہ داریاں ہیں، ابتدائی تخمینے کے مطابق سیلاب سے 30 ارب ڈالر کا نقصان ہوا۔ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں ہماری توقعات سے زیادہ بڑھ گئی ہیں۔

امریکی صدر سے متعلق گفتگو میں شہباز شریف کا کہنا تھا کہ امریکی صدر کے سیلاب متاثرین کے حوالے سے بیان پر شکریہ ادا کرتے ہیں، جب کہ اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیوگوتریس نے کہا ہے کہ انہوں نے زندگی میں ایسی تباہی نہیں دیکھی، سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ نے سیلاب سے ہونے والی تباہی دیکھی ہے۔

UNGA

pm shehbaz sharif

FLOOD 2022

Tabool ads will show in this div