پی ٹی آئی رہنما سے اختلاف گومل یونیورسٹی کے وائس چانسلر کو مہنگا پڑ گیا

قائم مقام گورنر خیبرپختونخوا نے پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد کو جبری رخصت پر بھجوادیا گیا

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور سابق وفاقی وزیر علی امین گنڈا پور سے اختلاف پر گومل یونیورسٹی کے وائس چانسلر کو جبری رخصت پر بھجوادیا گیا۔

گومل یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد کا پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور سابق وفاقی وزیر علی امین گنڈا پور سے کسی معاملے پر اختلاف ہوگیا تھا۔

چند روز قبل علی امین گنڈا پور نے گومل یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد کو ایک وٹس ایپ پیغام میں دھمکی تھی کہ انہیں (وی سی) کو گھر بھیج کر دم لیں گے۔

جس کے بعد گورنر خیبرپختونخوا نے آرٹیکل 105 کے تحت پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد کو جبری رخصت پر بھجوادیا ہے۔

ڈاکٹر افتخار احمد کے بعد زرعی یونیورسٹی کے وی سی پروفیسر ڈاکٹر مسرور الہی بابر کو گومل یونیورسٹی کے وی سی کا اضافی چارج بھی سونپ دیا گیا ہے۔

وفاقی حکومت کی تبدیلی کے بعد اس وقت کے گورنر شاہ فرمان مستعفی ہوگئے تھے، جس کے بعد سے اسپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی مشتاق غنی نے قائم مقام گورنر کے طور پر ذمہ داریاں سنبھال رکھی ہیں۔

PTI

KPK government

Tabool ads will show in this div