عمران خان کس حیثیت سے ایجنسیوں سے معلومات لیتے رہے، خواجہ آصف

آرمی چیف کی تقرری پر کوئی کارروائی نہیں ہورہی، سماء کے پروگرام میرے سوال میں گفتگو
Aug 19, 2022

وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا ہے کہ عمران خان کس حیثیت سے ایجنسیوں سے معلومات لیتے رہے؟، ایسے لوگوں کو ٹاؤٹ کہا جاتاہے۔

سماء کے پروگرام میرے سوال میں گفتگو کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا تقرری کے وقت فیصلے کیے جائیں گے، آرمی چیف کی تقرری پراس وقت کوئی کارروائی نہیں ہورہی، اس مہینے کے آخرمیں حالات بہترہونا شروع ہوجائیں گے۔

خواجہ آصف نے کہا شہبازگل کوکسی صورت سیاسی انتقام کا نشانہ نہیں بنایا جائے گا، شہبازگل کے بیان کی مذمت ان کی پارٹی کے رہنما بھی کررہے ہیں تو قانونی کارروائی پرحکومت کوکیوں گھسیٹا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان نے کہا شہبازگل کوایسابیان نہیں دینا چاہیے تھا، وزیر جیل خانہ جات پنجاب نے تشدد سے انکار کیا ہے، اگر صحت کا مسئلہ ہےتوشہبازگل کا چیک اپ ہوجائے گا، شہبازگل کوکچھ بیماریاں لاحق ہونے کی اطلاعات ہیں۔

وزیردفاع خواجہ آصف نے کہا عمران خان بتائیں ایجنسیاں انہیں 2008 سے 2018 تک کس حیثیت میں معلومات دیتی تھیں، عمران خان کہتے ہیں نیوٹرلزکونیوٹرل نہیں رہنا چاہیے میرا ساتھ دینا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ سابق صدر آصف زرداری نے پیٹرولیم قیمتوں میں اضافے پر اعتراضات کیے، نوازشریف کا کسی بات پراختلاف کرنا ان کا حق ہے۔

وزیر دفاع نے کہا کہ پی ٹی آئی کے بھارت میں ذرائع ہیں، ڈونیشن بھی ملتی ہے، شوکت خانم کیلئے آنے والا پیسہ پی ٹی آئی کیلئے استعمال ہوا، جن کمپنیوں کاڈونیشن دینانہیں بنتاوہ ڈونیشن دیتی رہیں، ثبوت کیساتھ الیکشن کمیشن نے بتا دیا یہ بندہ باہر سے پیسے لیتا تھا۔

خواجہ آصف نے کہا این سی اے نے جو پیسے بھجوائے وہ ریاست کے ہیں بحریہ ٹاؤن کوکیسے دیے؟، ہم اس ٹرانزیکشنز کیخلاف ہیں چاہے ملک ریاض ہو یا عمران خان، نیب نے اس معاملے پر کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔

وزیر دفاع نے کہا لسبیلہ واقعےمیں سوشل میڈیاپرہونیوالی پوسٹوں کوبھارت سےسپورٹ ملی، ان ٹرینڈ میں 33 اکاؤنٹس دوسرے ممالک سے آپریٹ ہورہے تھے، بغیر نیٹ ورکنگ کے ٹرینڈ نہیں چلایا جاسکتا۔

PML-N

PTI

federal government

KHAWAJA ASIF

DEFENSE MINISTER

meray sawal

Tabool ads will show in this div