بھارت میں ‘پاگل’ چیونٹیوں نے خوف پھیلا دیا

چیونٹیوں کے حملوں میں مویشیوں اور فصلوں کو نقصان

بھارتی ریاست تامل ناڈو کے مختلف دیہات میں زرد رنگ کی پاگل چیونٹیوں نے تباہی مچادی ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق تامل ناڈو کے سات دیہات میں رہنے والے لوگوں کا کہنا ہے وہ ان پاگل چیونٹیوں کی وجہ سے بھاری نقصان اٹھا رہے ہیں اور یہ چیونٹاں انکے مویشیوں اور فصلوں کو نقصان پہنچا رہی ہیں۔

یہ چیونٹیاں مویشیوں کی آنکھوں پر حملہ کرتی ہیں اور انکے حملوں میں سانپ اور خرگوش تک ہلاک ہوچکے ہیں جبکہ متعدد بکریاں بینائی سے محروم ہوئی ہیں۔

انٹرنیشنل یونین آف کنزرویشن کے مطابق یہ زرد پاگل چونٹیاں نقصان پہنچانے والے حشرات میں شامل ہیں جو تیزی سے پھیلتی ہیں۔

ان چیونٹیوں کا سائنسی نام انوپلولیپس گریسی لیپس ہے جو زیادہ تر گرم علاقوں میں پائی جاتی ہیں اور جب ان کی حرکت میں خلل پڑتا ہے تو وہ زیادہ بے چین ہو جاتی ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ چیونٹیاں تیزی سے پھیلتی ہیں اور مقامی جنگلی حیات کو بہت زیادہ نقصان پہنچا سکتی ہیں۔ آسٹریلیا کے بہت سے حصوں میں ان کیڑوں کے انفیکشن کی اطلاع ملی ہے۔

زرد پاگل چیونٹیوں پر تحقیق کرنے والے ماہر حیاتیات ڈاکٹر پرونوئے بیدیا کہتے ہیں کہ ان چیونٹیوں کی خوراک کی کوئی ترجیحات نہیں ہیں وہ سب کچھ کھاجاتی ہیں۔

تامل ناڈو کے ضلع دنڈیگول کے متاثرہ دیہات سرسبز علاقے میں موجود ہیں جہاں کرنتھامالئی کے جنگلات واقع ہیں اور یہاں لوگوں کی اکثریت کھیتی باڑی اور مویشی پالنے کا کام کرتی ہے۔

ایک دیہاتی جس کا نام سیلوام ور عمر 55 سال ہے نے بتایا کہ جب ہم جنگل کے قریب گئے تو چیونٹیاں ہمارے اوپر چڑھ گئیں اور کاٹنے لگیں جس سے ہمارے جسم پر چھالے پڑ گئے، چیونٹیوں کی تعداد اتنی زیادہ تھی کہ ہمیں پانی پینے کا بھی موقع نہیں ملا۔

دیہات والوں نے بتایا کہ انہیں یہ پاگل چیونٹیاں گزشتہ کچھ برس سے نظر آرہی ہیں لیکن ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ ان چونٹیوں کی بڑی تعداد گاؤں کے اندر بھی آگئی ہے جس نے وہاں کے مکینوں کی زندگی اجیرن کررکھی ہے۔

سرکاری ویٹرنری ڈاکٹر نے بتایا کہ یہ چیونٹیاں عام چیونٹیوں کی طرح ہی نظر آتی ہیں، نہیں معلوم کہ یہ کیوں پھیل رہی ہیں اور ہمیں نہیں سمجھ آرہی کہ ان پر کس طرح سے قابو پائیں۔ انہوں نے کہا کہ جب تک مسئلہ حل نہ ہو لوگ اپنے مویشیوں کو چرنے کیلئے جنگل کی طرف نہ بھیجیں۔

مقامی محکمہ جنگلات کے افسر نے بتایا کہ انہوں نے افسران کو سروے کرکے رپورٹ جمع کرانے کی ہدایت کی ہے، رپورٹ موصول ہونے تک وہ اس معاملے پر کوئی بات نہیں کرسکتے۔

ماہرین اس بات پر پریشان ہیں کہ یہ چیونٹیاں خطے میں ماحولیات کو نقصان پہنچانے کا سبب بن سکتی ہیں۔

انڈیا

Tamil Nado

CRAZY YELLOW ANTS

ECOLOGY

Tabool ads will show in this div