شہباز گل کو سانس کا مسئلہ ہے،پولیس نے میڈیکل رپورٹ جمع کرادی

ایڈووکیٹ جنرل،ایڈیشنل اٹارنی جنرل اسلام آباد ہائیکوٹ طلب
<p>فائل فوٹو: اسلام آباد کی مقامی عدالت میں شہباز گل کی پیشی کا منظر</p>

فائل فوٹو: اسلام آباد کی مقامی عدالت میں شہباز گل کی پیشی کا منظر

اسلام آباد پولیس نے ماتحت عدالت میں پاکستان تحریک انصاف ( پی ٹی آئی ) کے رہنما شہباز گل کی میڈیکل رپورٹ جمع کرا دی ہے۔

18 اگست بروز جمعرات کو جوڈیشل مجسٹریٹ راجہ فرخ علی کی عدالت میں پولیس کی جانب سے جمع کرائی گئی میڈیکل رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ شہباز گل سانس کی تکلیف کیلئے ضرورت پڑنے پر ایک مخصوص دوا استعمال کرتے ہیں۔

ڈیوٹی جج راجہ فرخ علی کی عدالت میں جمع کرائی گئی میڈیکل رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ شہباز گل کندھے ، گردن اور چھاتی کے بائیں جانب درد بھی محسوس کر رہے ہیں۔ ان کی ای سی جی کرائی گئی ہے۔

میڈیکل بورڈ نے ایکسرے اور کچھ مزيد ٹیسٹ کرانے کا مشورہ دیا ہے، کارڈیالوجسٹ اور پلمانولوجسٹ سے طبی معائنہ بھی درکار ہے۔ رپورٹ کے مطابق شہباز گل کے مزید طبی معائنے کی ضرورت بھی پڑ سکتی ہے۔

قبل ازیں اسلام آباد ہائی کورٹ ( Islamabad High Court ) نے بغاوت کے مقدمے میں گرفتار پاکستان تحریک انصاف ( پی ٹی آئی ) کے رہنما شہباز گل ( Muhammad Shahbaz Gill ) کے دوبارہ جسمانی ریمانڈ کے خلاف درخواست پر سپریڈنٹ اڈیالہ جیل کو دوپہر تین بجے طلب کرلیا۔ قائم مقام چیف جسٹس نے کہا کہ مجھے میڈیا سے پتا چلا ہے کہ شہباز گل پمز میں ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے قائم مقام چیف جسٹس عامر فاروق نے بغاوت کے مقدمے میں شہباز گل کے دوبارہ جسمانی ریمانڈ کے خلاف درخواست پر آج بروز جمعرات 18 اگست کو سماعت کی۔ اس موقع پر شہباز گل کے وکیل فیصل چوہدری اور شعیب شاہین عدالت کے سامنے پیش ہوئے۔

سماعت کے آغاز پر عدالت نے استفسار کیا کہ کیا آپ نے فزیکل ریمانڈ آرڈر چیلنج کیا ہے ؟ جس پر وکیل شعیب شاہین نے کہا کہ ایڈیشنل سیشن جج نے قانون کے اندر دی گئی ہدایات کو فالو نہیں کیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پولیس کو نوٹس جاری کرکے تین بجے تک جواب طلب کر لیا، جب کہ ایڈووکیٹ جنرل اور ایڈیشنل اٹارنی جنرل کو بھی معاونت کیلئے طلب کرلیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ شہباز گل نے سیشن کورٹ کے 48 گھنٹے کا جسمانی ریمانڈ دینے کے فیصلے کو چیلنج کر رکھا ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے باہر شہباز گل کے وکیل فیصل چوہدری نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ عدالت نے جیل سپرٹنڈنٹ، آئی جی اسلام اور میڈیکل افسر کو پیش ہونے کی ہدایت کی ہے، شہباز گل کی میڈیکل رپورٹ بھی ابھی تک جمع نہیں کرائی گئی، اس سے لگتا وہ ٹھیک نہیں ہیں لیکن ان کی صحت مند کی رپوٹ بنانے کا دباؤ ہے۔

انہوں نے کہا کہ شہباز گل پر تشدد ہوا ہے یہ سب کو معلوم ہے، ہمیں ملنے بھی نہیں دیا جا رہا۔

Tabool ads will show in this div