ملیر ندی میں ڈوبنے والی فیملی کی تلاش، بچے کی لاش نکال لی گئی

گاڑی پل سے بہتے ہوئے ڈیڑھ کلو میٹر دور چلی گئی تھی

ملیر ندی ( Malir River ) میمن گوٹھ کے مقام پر سیلابی ریلے میں ڈوبنے والی گاڑی میں سوار فیملی کی تلاش جاری ہے، تاہم غوطہ خوروں کی جانب سے ندی سے بچے کی لاش نکالی گئی ہے، جو ممکنہ طور پر متاثرہ خاندان کی ہے۔ ریسکیو ٹیموں نے جمعرات کی صبح ملیر ندی سے گاڑی کو نکالا تھا۔

کاٹھور کے قریب ملیر ندی میں گزشتہ روز 17 اگست بروز بدھ کو شام 6 بجے کے قریب گاڑی میں سوار خاندان کا اپنے رشتے داروں سے آخری رابطہ ہوا تھا۔

ایدھی کے رضا کاروں نے ڈوبنے والی گاڑی کو ریلے سے نکال لیا، لیکن گاڑی میں سوار فیملی کی تلاش کا کام تاحال جاری ہے۔ غوطہ خوروں نے ندی سے بچے کی لاش نکالی ہے، جس کے بارے میں ممکنہ طور پر کہا جا رہا ہے کہ وہ متاثرہ فیمیلی کے بچے کی ہے۔

ابتدائی معلومات کے مطابق لاپتا اہل خانہ کا تعلق حیدرآباد سے ہے، جو کراچی سے اپنی منزل کیجانب رواں دواں تھا۔

گاڑی میں میاں بیوی، 4 بچے اور ڈرائیور سوار تھے۔ گاڑی پل سے بہتے ہوئے ڈیڑھ کلو میٹر دور چلی گئی تھی۔

دوسری جانب ملیر ندی ( Malir Naddi ) کے سیلابی پانی میں عمر سنز کے مقام پر 2 لڑکوں کے پھنسنے کی اطلاع پر امدادی ٹیمیں روانہ ہوگئیں۔

بارشوں ( Karachi Rain ) کے بعد کورنگی کاز وے روڈ ٹریفک کے لیے تاحال بند ہے۔ میمن گوٹھ کے قریب ملیر ندی پر بنے ریزروائر کی دیوار سے کئی فٹ اوپر سے پانی گزر رہا ہے۔ ادھر گلستان جوہر میں اسکول وین کیچڑ میں پھنسنے کی ویڈیو وائرل ہوگئی۔

عوام احتیاط کریں

سیکریٹری محکمہ اطلاعات کے مطابق ملیر ندی کے سیلابی ریلہ میں بہہ جانے والے خاندان کی تلاش جاری ہے، ان کی گاڑی مل گئی ہے ،جس میں وہ لوگ موجود نہیں۔

عبدالشید سولنگی کے مطابق ڈپٹی کمشنر ملیر کی نگرانی میں ان افراد کی تلاش کا کام جاری ہے، ایدھی کے رضا کار سرگرمی سے مصروف عمل ہیں۔ اس خاندان کو مقامی افراد نے سیلابی پانی میں جانے سے منع کیا تھا، لیکن انہوں نے اسے نظر ا نداز کرتے ہوئے اپنا سفر جاری رکھا۔ پانی کی شدت کے باعث ان کی گاڑی اس ریلہ میں بہہ گئی۔ عوام سے اپیل ہے کہ وہ بھرپور احتیاط کا مظاہرہ کریں۔ ضلعی انتظامیہ ملیر کی جانب سے دی جانے والی ہدایات پر عمل کریں۔

Tabool ads will show in this div