ملک کے کئی شہر سمندر برد ہونے کا خدشہ

وزارت موسمیاتی تبدیلی کی سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کو بریفنگ

وزارت موسمیاتی تبدیلی نے پاکستان کے بڑے شہر سمندر برد ہونے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد میں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے موسمیاتی تبدیلی کا اجلاس ہوا۔ سیکریٹری آصف حیدر شاہ نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کو بتایا کہ ہمارا سمندر چھتیس سے پچاس سینٹی میٹر تک بلند ہوسکتا ہے۔ جس کی وجہ سے ملک کے بڑے شہر سمندر برد ہونے کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جلد کابینہ کو بھی اس خدشے سے آگاہ کردیں گے۔

نوٹ: بریفنگ کے دوران سیکریٹری کی جانب سے ان شہروں کی فی الحال نشاندہی نہیں کی گئی جس کو خدشہ لاحق ہے۔

آصف حیدر نے یہ انکشاف بھی کیا کہ آنے والے دنوں میں پینے کے صاف پانی کی قلت ہوسکتی ہے، اس سلسلے میں مستقبل میں کسی بھی صورت حال سے نمٹنے کیلئے وزارت آبی وسائل کے ساتھ مل کر کام کرنا ہوگا۔

اجلاس کے دوران پی ٹی آئی سینیٹر فیصل جاوید اور پی پی سینیٹر شیری رحمان کے درمیان تلخ کلامی بھی ہوئی۔ کمیٹی اجلاس میں فیصل جاوید نے اپنے دورِ حکومت میں وزارت موسمیاتی تبدیلی کی کاموں کی تعریف کی تو شیری رحمان نے انہیں کھری کھری سنا دیں۔

شیری رحمان کا کہنا تھا کہ یہ سیاسی فورم نہیں، آپ نے جو کام کئے وہ ٹھیک نہیں تھے، آپ نے 2030ء تک کاربن کا اخراج 50فیصد تک کم کرنے کا کہا، آپ نے نیشنل ایکشن پلان بنایا نہیں تو یہ کیسے ہوگا؟۔

شیری رحمان نے یہ بھی کہا کہ آپ نے ترقی پزیر ممالک جیسا کام کرنے کا اعلان کردیا، آپ نے الیکٹرک وہیکلز چلا دیں مگر چارجنگ اسٹیشنز لگائے نہیں، آپ کیسے کہہ سکتے ہیں کہ پچھلے دور میں سارے اچھے کام ہوئے۔

کمیٹی اجلاس میں حالیہ دنوں میں قیمتوں میں جنگلات میں لگنے والی آتشزدگی پر بھی بات چیت ہوئے۔ جنگلات میں آتشزدگی کے حوالے سے سیکریٹری کی جانب سے بریفنگ دی گئی۔ جس پر جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے شدید تنقید کی۔

سیکریٹری آصف حیدر نے کہا کہ بڑھتے ہوئے درجہ حرارت کی وجہ سے آگ لگ رہی ہے، جس پر مشتاق احمد کا کہنا تھا کہ آپ کہتے ہیں کہ درجہ حرارت بڑھنے کی وجہ سے آگ لگی، ایوان بالا کے پیچھے مارگلہ کے جنگلات میں آگ کیوں لگتی ہے؟ یہاں پر تو درجہ حرارت اتنا تھا ہی نہیں کہ آگ لگتی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہاں پر پوا گینگ ہے، جنگل خور، پہاڑ خور گینگ ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ یہ سارے گینگ حکومت کے ساتھ ملے ہوئے ہیں۔

Tabool ads will show in this div