کراچی : قومی اسمبلی کی تین نشستوں پر ضمنی انتخاب کا شیڈول جاری

ضمنی انتخاب ستمبر میں ہوگا

الیکشن کمیشن کی جانب سے کراچی میں قومی اسمبلی کی تین نشستوں پر ضمنی انتخاب کا شیڈول جاری کردیا گیا ہے۔ ان نشستوں پر انتخاب کیلئے کاغذات نامزدگی آج سے جاری ہوں گے۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے بدھ 10 اگست کو ضمنی انتخاب کا شیڈول جاری کیا گیا۔ الیکشن کمیشن کے مطابق قومی اسمبلی کی 3نشستوں پر ضمنی الیکشن 25 ستمبر بروز اتوار کو ہوں گے۔ جب کہ اس سلسلے میں کاغذات نامزدگی 10 سے 13 اگست تک جمع کرائے جا سکتے ہیں۔

ڈسٹرکٹ الیکشن کمیشن ملیر سے صرف ن لیگ کے امیدوارکو فارم جاری ہوا ہے۔ ضمنی انتخاب کیلئے دائر کاغذات نامزدگی پر اسکرونٹی 17 اگست کو ہوگی، جب کہ امیدواروں کو انتخابی نشانات 29 اگست کو جاری کیے جائیں گے۔ واضح رہے کہ پی ٹی آئی کے ارکان قومی اسمبلی کے استعفوں کے بعد یہ نشستیں خالی ہوئی تھیں۔

واضح رہے کہ قومی اسمبلی کے اسپیکر راجا پرویز اشرف نے پی ٹی آئی کے 11 اراکین کے استعفے منظور کرنے کے بعد نوٹی فکیشن الیکشن کمیشن کو ارسال کردیا تھا۔

قومی اسمبلی کے ترجمان نے کہا تھا کہ اسپیکر قومی اسمبلی نے آئین پاکستان کی آرٹیکل 64 کی شق (1) کے تحت تفویص اختیارات کو بروئے کار لاتے ہوئے استعفے منظور کیے ہیں۔

پی ٹی آئی کے جن اراکین کے استعفے منظور کیے گئے تھے ان میں این اے-22 مردان 3 سے علی محمد خان، این اے-24 چارسدہ 2 سے فضل محمد خان، این اے-31 پشاور 5 سے شوکت علی، این اے-45 کرم ون سے فخر زمان خان، این اے-108 فیصل آباد 8 سے فرخ حبیب، این اے-118 ننکانہ صاحب 2 سے اعجاز احمد شاہ، این اے-237 ملیر 2 سے جمیل احمد خان، این اے-239 کورنگی کراچی ون سے محمد اکرم چیمہ، این اے-246 کراچی جنوبی ون سے عبدالشکور شاد بھی شامل ہیں۔

یاد رہے کہ اپریل میں سابق وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں پی ٹی آئی اراکین نے مشترکہ طور پر قومی اسمبلی کی رکنیت سے استعفیٰ دینے کا فیصلہ کیا تھا۔ اسمبلی سے بڑے پیمانے پر مستعفی ہونے کے فیصلے کا اعلان پی ٹی آئی کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے 11 اپریل کو وزیر اعظم شہباز شریف کے انتخاب سے چند منٹ قبل اسمبلی کے فلور پر کیا تھا۔

بعد ازاں اسپیکر قومی اسمبلی راجا پرویز اشرف نے پی ٹی آئی کے 123 اراکین اسمبلی کے استعفوں کی تصدیق کا عمل انفرادی طور پر یا چھوٹے گروپس میں بلا کر شروع کرنے کا فیصلہ کیا تھا، لیکن پی ٹی آئی کا کوئی رکن استعفے کی تصدیق کے لیے اسپیکر کے سامنے پیش نہیں ہوا تھا۔

Tabool ads will show in this div