آڈٹ کے سوال پر عمران خان نے میرا گریبان پکڑلیا، سابق عہدیدار PTI امریکا

رقم کہاں خرچ ہوتی ہے آڈیٹر کو نہیں بتایا جاتا تھا، محبوب اسلم
Aug 07, 2022

Meray Sawal - Audit ka mutalba karne par imran khan ne mera girebaan pakarliya - 7 August 2022

تحریک انصاف کے لئے فنڈز اکٹھے کرنے والے پی ٹی آئی امریکا کے سابق عہدیدار نے اہم راز اگل دیے۔

محبوب اسلم نے سماء کے پروگرام میرے سوال میں انکشاف کیا کہ پارٹی فنڈ کا آڈٹ کرنے والے آڈیٹر نے بتایا کہ میرے ہاتھ بندھے ہیں مجھے صرف انکم کا ریکارڈ دکھایا جاتا ہے، رقم خرچ کہاں ہوتی ہے اسکا کچھ علم نہیں، عمران خان سے ملاقات میں پارٹی فنڈنگ کے آڈٹ کوجھرلو اور جعلی کہا تو عمران خان غصے میں آگئے اور انہوں نے کرسی سےاٹھ کر میرا گریبان پکڑلیا۔

پروگرام میرے سوال میں گفتگو کرتے ہوئے محبوب اسلم نے کہا جب ہم پی ٹی آئی کی ممبر سازی کرتے تھے تو اسکے ساتھ فنڈ ریزنگ بھی ہوتی تھی پارٹی کی ممبر شپ فیس 10 ڈالر ماہانہ مقرر تھی اور ممبر بننے کیلئے 120 ڈالر دینا پڑتے تھے۔

محبوب اسلم نے کہا پی ٹی آئی یو ایس ایل ایل سی کے نام سے ایک کمپنی بنائی گئی تھی جس میں سارا پیسہ جمع ہوتا تھا اور یہاں سے پاکستان چلا جاتا تھا، امریکا میں مجموعی طور پر ساڑھے تین ملین ڈالر کا فنڈ جمع کیا۔

محبوب اسلم نے کہا 2013 میں حفیظ اللہ نیازی نے مجھ سے ملاقات کی جو اکبر ایس بابر کے گھر ہوئی تھی، انہوں نے کچھ افراد کی بینک اسٹیٹمنٹس میرے سامنے میں رکھیں جو پی ٹی آئی کے ملازم تھے جن کی تنخواہیں 15 بیس ہزار تھیں لیکن انکے اکاونٹس میں لاکھوں روپے موجود تھے

انہوں نے کہا اکبر ایس بابر نے مجھے بتایا کہ باہر سے جو پیسہ آتا ہے وہ پارٹی اکاؤنٹس کے بجائے پرائیویٹ اکاؤنٹس میں جاتا ہے۔ سیف اللہ نیازی اور عامر کیانی وغیرہ نے اس پیسے سے ریئل اسٹیٹ کے بزنس کھڑے کیے ہوئے ہیں اور بنی گالہ کے آس پاس کافی زمین خریدی گئی ہے۔

PTI

meray sawal

Tabool ads will show in this div