بھارتی ناظم الامورکی دفترخارجہ طلبی، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر احتجاج

بھارتی حکومت 5 اگست 2019 کے غیر قانونی اقدامات واپس لے، پاکستان

مقبوضہ کشمیرمیں بگڑتی ہوئی انسانی حقوق کی صورتحال پر بھارتی ناظم الامورکو دفترخارجہ طلب کرکے شدید احتجاج کیا گیا۔

ترجمان دفترخارجہ کے مطابق بھارتی حکومت 5 اگست 2019 کے یکطرفہ اورغیر قانونی اقدامات واپس لے۔ اقدامات جنیوا کنونشن اور سلامتی کونسل کی قراردادوں کے برعکس ہیں۔

عاصم افتخار کا کہنا تھا کہ 3 برس بعد بھی بھارتی فوجی محاصرے کی شدت کم نہ ہوئی اور صورتحال بگڑتی جارہی ہے۔

ترجمان کے مطابق بین الاقوامی تسلیم شدہ متنازعہ خطے کی حیثیت کی تبدیلی کے یکطرفہ اور غیرقانونی اقدامات پاکستان سختی سے مسترد کرتا ہے۔ بھارتی حکومت 5 اگست 2019 کے یکطرفہ اورغیر قانونی اقدامات واپس لے۔

خیال رہے کہ یوم استحصال کے موقع پر مقبوضہ وادی فوجی چھاؤنی میں تبدیل کردی گئی جبکہ بھارتی فوج کے ہاتھوں ایک اور نوجوان شہید ہوگیا۔

دریں اثنا مقبوضہ کشمیر کے مختلف علاقوں میں آج یوم استحصال اور یوم سیاہ کے سلسلے میں سیاہ جھنڈے لہرائے گئے، بھارتی فورسز کی جانب سے ہراساں کیے جانے کے باوجود کشمیریوں نے مختلف علاقوں میں سیاہ جھنڈے لہرائے۔

Occupied Kashmir

Foreign Office Spokesperson

Tabool ads will show in this div