آئی ایم ایف کے پاس جانےکےسوا کوئی چارہ نہیں تھا،مفتاح اسماعیل

مشکل فیصلے کرکےملک کو ڈیفالٹ سےبچایا

وفاقی وزیرخزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ پاکستان نادہندہ ہونے کے قریب تھا اور آئی ایم ایف کے پاس جانے کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا، مشکل فیصلے کرکےملک کو ڈیفالٹ سےبچایا ۔

کراچی میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے مفتاح اسماعیل نے کہا کہ پاکستانی معیشت کے مسائل امپورٹ کم کرنے حل ہوگئے ہیں اور اب 3 ماہ تک امپورٹ نہیں بڑھنے دیں گے اور اس دوران کوئی حکمت عملی نکالیں گے۔

انھوں نے بتایا کہ پاکستان نادہندہ ہونے کےقریب تھا اوراس لیے آئی ایم ایف سے قرض لیا کیوں کہ آئی ایم ایف کے پاس جانےکے سوا کوئی چارہ نہیں تھا اور دوست ملک بھی آئی ایم ایف سے معاہدے کےلیے کہہ رہے تھے، دوست ممالک انتظارمیں ہیں کہ آئی ایم ایف پیکج دےتووہ امداددیں ۔

مفتاح اسماعیل نےبتایا کہ ملک میں آنے والے ڈالر زیادہ اور جانےوالےکم تھے،اس لیےڈالرکی قیمت کم ہوئی۔

وزیرخزانہ نے تسلیم کیا کہ مجبوری میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھانا پڑیں اوریہ قیمتیں بڑھنےسےمہنگائی میں اضافہ ہوا۔

انھوں نے مزید بتایا کہ ہمیں اس سال بجٹ خسارہ کنٹرول کرناہے، ہمارے پاس30 دن کا ڈیزل، 25 دن کا پیٹرول6 ماہ کا فرنس آئل موجود ہے۔

imf

Miftah Ismail

Tabool ads will show in this div