ضلع وسطی کے ایکسیئن نے رین ایمرجنسی اور روڈ کٹنگ پر پابندی کے احکامات ہوا میں اڑادیئے

ناظم آباد 5 نمبر میں روڈ کھدوا کر شہریوں کی زندگیاں داؤ پر لگا دیں

ضلع وسطی کے ایکسیئن فیصل صغیر نے رین ایمرجینسی اور روڈ کٹنگ پر پابندی کے حکومتی احکامات ہوا میں اڑا دیئے، ضلع کے مختلف علاقوں میں روڈ کٹنگ کا سلسلہ جاری ہے۔

گزشتہ دونوں برسات کے دوران جب حکومت سندھ کے اعلیٰ افسران وزراء کے ہمراہ شہر کی صورتحال درست کرنے کیلئے اقدامات کر رہے تھے، اسی دوران محکمہ بی اینڈ آر کے افسران نے موقع کا فائدہ اٹھا کر ایکسیئن کی سرپرستی میں ناظم آباد 5 نمبر کے علاقے میں روڈ کھدوا کر شہریوں کی زندگیاں داؤ پر لگا دیں۔

برسات کے دوران روڈ کٹنگ پر نا صرف علاقہ مکینوں کی جانب سے شدید ردعمل کا اظہار کیا گیا بلکہ علاقہ مکینوں نے سڑک پر کھدائی کی اطلاع ڈپٹی کمشنر کو بھی دی تاہم غیرقانونی طور پر ایکسیئن کے عہدے پر براجمان فیصل صغیر اور سڑک کی کھدائی کرنے والوں کیخلاف سخت قانونی کارروائی کرنے کے بجائے ڈپٹی کمشنر نے خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ کے افسران نے ٹھیکیدار سے مذکورہ پکی سڑک کی کھدائی کا چالان لینے کے بجائے مبینہ طور پر لاکھوں روپے رشوت کے عیوض کچے کا چالان جاری کیا۔

ذرائع کے مطابق بااثر ایکسیئن نے ایک جانب پابندی کے باوجود روڈ کٹنگ کی اجازت دیکر ٰاعلی حکام کے احکامات پر سوالیہ نشان لگا دیا ہے تو دوسری طرف روڈ کٹنگ کی مد میں لاکھوں روپے کم ٹیکس لے کر سرکاری خزانے کو بھی بھاری نقصان پہنچایا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ فیصل صغیر اس سے قبل بھی ایک سابق ایڈمنسٹریٹر کے دور میں مبینہ طور پر لاکھوں روپوں کے عیوض بڑے پیمانے پر روڈ کٹنگ کے اجازت نامے تقسیم کرچکا ہے۔

کراچی

Monsoon Rain

Tabool ads will show in this div