وزیراعظم شہباز شریف سے چینی وفد کی ملاقات

چین نے پاکستان میں منصوبوں کی تکمیل یقینی بنائی

چین کے وفد سے ملاقات میں وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا ہے کہ چینی صدر شی جِن پنگ اور چینی قیادت کے پاکستان کی ہر مشکل مرحلے میں مدد پر مجھ سمیت پوری قوم ان کی مشکور ہے۔

وزیرِ اعظم شہباز شریف سے شنگھائی الیکٹرک کے صدر لیو پنگ کی قیادت میں چینی وفد نے 27 جولائی بروز بدھ اسلام آباد میں اہم ملاقات کی۔ ملاقات میں سابق وزیرِاعظم شاہد خاقان عباسی، وفاقی وزیرِ بجلی خرم دستگیر خان، وزیرِ مملکت پیٹرولیم ڈاکٹر مصدق ملک، معاونینِ خصوصی ظفر الدین محمود، ڈاکٹر جہانزیب خان اور متعلقہ اعلی حکام بھی موجود تھے۔

ملاقات میں اعلیٰ حکام کی جانب سے شرکا کو بتایا گیا کہ 1320 میگاواٹ تھر کول پاور پراجیکٹ گزشتہ سالوں میں تعطل کا شکار رہا مگر موجودہ حکومت کے تعاون کی بدولت نہ صرف اس پر تیزی سے کام جاری ہے بلکہ 2023 کی پہلی سہ ماہی میں اسے مکمل کر لیا جائے گا۔

اجلاس میں یہ بھی بتایا گیا کہ منصوبے کی وجہ سے 7000 مقامی لوگوں کو روزگار فراہم کیا گیا۔ حکام کے مطابق شنگھائی الیکٹرک پاکستان میں جنریشن، ٹرانسمیشن اور ڈسٹری بیوشن میں مزید سرمایہ کاری میں گہری دلچسپی رکھتی ہے، جس کا وزیرِ اعظم نے خیر مقدم کیا۔

اس موقع پر شنگھائی الیکٹرک کے صدر نے پاکستانی وزیرِاعظم اور ان کی ٹیم کا منصوبے کی تکمیل کیلئے تعاون پر شکریہ ادا کیا۔

اجلاس سے خطاب میں وزیراعظم شہباز شریف کا کہنا تھا کہ چینی کمپنیوں نے پاکستان میں برق رفتاری سے منصوبوں کی تکمیل یقینی بنائی، جو قابلِ ستائش ہے، اس کی تکمیل سے مقامی کوئلے سے 1320 میگاواٹ بجلی کی عوام کو جلد فراہمی ممکن ہو سکے گی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ چینی تعاون سے جاری ترقیاتی منصوبوں کو مزید تعطل کا شکار نہیں ہونے دیں گے، حکومت چینی کمپنیوں کے ساتھ تعاون اور سرمایہ کاری بڑھانے کیلئے سنجیدگی سے اقدامات کر رہی ہے۔

وزیراعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ چینی کمپنیوں کے انجینیرز اور مزدوروں کے تحفظ کیلئے تمام تر ضروری اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں۔

پاکستان

cpec

CHINA

PM SHAHBAZ SHARIF

Tabool ads will show in this div