اٹلی میں بدترین خشک سالی کا 70 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا

آرائشی فواروں کو بند ، گاڑیاں دھونے اور پودوں کو غیر ضروری پانی نہ دینے کی ہدایات

شمالی اٹلی میں انتہائی کم بارشوں کے سبب 5 علاقے بری طرح خشک سالی کا شکار ہو گئے۔

اٹلی کے شمالی میں واقع امیلیا ، روماگرا ، فریوللی ونیزیا ، لومبرڈی، پیڈمونٹ اور وینٹو میں پانی کی شدید قلت کا سامنا ہے۔ خشک سالی سے نمٹنے کے لئے حکومت کی جانب سے 36 ملین یورو کے فنڈز جاری کر دیئے گئے ہیں

حکومت کی جانب سے پانی کے فواروں کو بند کرنے سمیت، گاڑیوں کو دھونے سمیت، پودوں کو بلاضرورت پانی نہ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ جبکہ کئی موینسپلز میں پانی کا زرخیرہ کرنے کے لئے کہا گیا ہے۔

  آرائشی فواروں کو بند کر دیا گیا
آرائشی فواروں کو بند کر دیا گیا

   حکومتی فیصلے کے  قبل کی گئی ایک فوارے کی تصویر
حکومتی فیصلے کے قبل کی گئی ایک فوارے کی تصویر

غیر معمولی طور پر گرم موسم ، سیزن سے بہت زیادہ کم بارشوں اور موسمیاتی تبدیلیوں نے اٹلی کے شمالی حصے کو بھی بری طرح متاثر کیا ہے۔ یورپی ملک اٹلی کو ستر برس میں سب سے زیادہ موجودہ وقت میں قحط اور خشک سالی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ اس خشک سالی کے باعث خدشہ ہے کہ اٹلی کی تیس فی صد سے زائد زرعی پیداوار کو نقصان پہنچنے کا خطرہ ہے ۔

کچھ دن قبل ہی شدید موسمی تبدیلیوں کے باعث اٹلی کے انتہائی شمال میں ایلپس پہاڑی سلسلے میں گلیشیئر ٹوٹ گیا ۔ جس کے نتیجے میں سات افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوئے۔

climate change

global warming

Tabool ads will show in this div