اسلام آباد ہائی کورٹ نے وزیر اعظم کو لاپتہ افراد پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

وزیراعظم ذمہ داروں کےخلاف کارروائی سےبھی عدالت کوآگاہ کریں،حکمنامہ

** اسلام آباد ہائی کورٹ نے وزیراعظم کو لاپتہ افراد پیش کرنے کا حکم دے دیا۔**

اسلام آباد ہائی کورٹ نے لاپتہ افراد کی بازیابی سے متعلق درخواستوں پر عنبوری حکم نامہ جاری کردیا۔

اپنے عبوری حکم نامے میں ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ وزیر اعظم 9 ستمبر کو لاپتہ افراد کی عدالت پیشی یقینی بنائیں، لاپتہ افراد کو پیش کرنے میں ناکامی پر وزیر اعطم خود پیش ہوں۔

حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم کوپیش ہو کر ریاست کی آئینی ذمہ داریوں میں ناکامی کی وضاحت دیناہوگی، وزیراعظم ذمہ داروں کے خلاف کارروائی سے بھی عدالت کو آگاہ کریں۔

اس سے قبل چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہر من اللہ نے مدثر نارو اور دیگر لاپتہ افراد کی بازیابی سے متعلق کیسز پر سماعت کی، لاپتہ افراد کی جانب سے وکلا انعام الرحیم ، ایمان مزاری اور دیگر جبکہ وفاق کی جانب سے ڈپٹی اٹارنی جنرل ارشد محمود کیانی عدالت میں پیش ہوئے۔

جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیا کہ ساری ایجنسیاں کس کے کنٹرول میں ہیں؟کون ذمہ دارہے ؟

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کے روبرو موقف اختیار کیا کہ چیف جسٹس یہ سب ایجنسیاں وفاقی حکومت کے زیر کنٹرول ہیں، وزیر داخلہ کابینہ اجلاس میں ہیں اس لئے سماعت ملتوی کی جائے، جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ التوا نہیں ہوگا، دلائل دیں یا چیف ایگزیکٹو کو سمن کریں گے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے ریمارکس دیئے کہ عدالت صرف آئین کے مطابق چلے گی ہمیں بنیادی حقوق کا تحفظ کرنا ہے، واضح ہے کہ موجودہ اور سابقہ حکومتوں کا معاملے میں فعال کردار نہیں۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے کہا کہ مانتے ہیں یہ کیسز جیسے حل ہونے چاہئیں تھے ویسے نہیں ہورہے، یقین دہانی کرواتا ہوں کابینہ کمیٹی تمام ایشوز دیکھےگی، موجودہ حکومت کوتھوڑا وقت دے دیں ۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ریاست کا وہ رسپانس نہیں جو ہونا چاہيے تھا، احساس ہوتا تو متاثرین کو عدالت نہ آنا پڑتا آپ انہیں تلاش کرتے، اب مزید وقت نہیں دیا جا سکتا ، یہ عدالت کسی کوذمہ دار ٹھہرانا چاہتی ہے، جس کے دور میں لوگ لاپتہ ہوئے وہی ذمہ دار ہیں۔

دوران سماعت عدالتی معاون فرحت اللہ بابر نے روسٹرم پر آکر کہا کہ لاپتہ افراد کمیشن سربراہ نے ریکارڈ پر کہا کہ کچھ کیسز میں آرمڈ فورسز کا معاملہ ہے، جولائی 2019 میں آئی ایس پی آر نے کہا کہ سارے لاپتہ افراد ہمارے پاس نہیں، مسئلہ یہ ہے آئی ایس آئی کسی قانون کے ماتحت نہیں، ریاست کے اندر ریاست ہے عدالتوں کے فیصلے نہیں مانے جاتے۔

فرحت اللہ بابر نے کہا کہ آئی ایس آئی براہ راست وزیر اعظم کے ماتحت ہے، پارلیمنٹ اب اپنی ذمہ داری یوں منتقل نہ کرے، آپ یہ کہہ رہے ہیں کہ ریاست کے اندر ریاست موجود ہے؟ ایسا ہے تو تو پھر چیف ایگزیکٹو کو خود اس عدالت میں آکر یہ کہنے دیں۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ کیا پارلیمنٹ یہ مؤقف اختیار کر سکتی ہے کہ وہ بے یار و مددگار ہے، پارلیمنٹ کے پاس اختیارات ہیں، باتیں سب کرتے ہیں عملا کوئی کچھ نہیں کرتا، نہایت قابل عزت پارلیمنٹیرین عدالت کو کہہ رہے ہیں کہ آئین “ورک ایبل” نہیں۔

عدالتی معاون عابد ساقی نے کہا کہ فیصلہ دینے سے پہلے عدالت وزیرداخلہ کو بلائے، وزیر داخلہ کے بعد وزیراعظم کو بھی طلب کیا جائے، اگر وزیر اعظم حکم نہ مانیں تو تاریخ الگ طرح لکھی جائےگی، ماضی میں احکامات نہ ماننے پر عدالت وزیراعظم کو نااہل کرچکی ہے۔

دوران سماعت فرحت اللہ بابر نے بھی وزیر اعظم کو طلب کرنے کی حمایت کر دی، انہوں نے کہا کہ چیف ایگزیکٹو سے نیچے والوں کو بہت بار بلایا جاچکا لیکن بات نہیں بنی، وزیراعظم کو بلایا جائے تو کئی چیزیں سامنے آجائیں گی۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کے روبرو کہا کہ جو لوگ لاپتہ ہوئے ان کے ساتھ کوئی ذاتی دشمنی نہیں ، 22 کروڑ عوام کی سیکیورٹی کا معاملہ بھی دیکھنا ہوتا ہے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے ریمارکس دیئے کہ ریاست کو آخری موقع دے رہے ہیں کہ اپنا ردعمل دکھائے، ریاست تمام لاپتہ افراد کو بازیاب اور متاثرین کو مطمئن کرے، ملک کے چیف ایگزیکٹو کا ذمہ داروں کے خلاف ایکشن نظر آئے، 9 ستمبر تک ٹھوس اقدامات نہ ہوئے تو وزیراعظم خود پیش ہوں گے۔

ISLAMABAD HIGH COURT

Missing Person

Tabool ads will show in this div