شہباز شریف کی ترقی صرف اشتہارات میں ہوتی ہے، عمران خان

جمہوریت ڈنڈے اور آنسو گیس سے نہیں اخلاقیات سے چلتی ہے، چیئرمین تحریک انصاف

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کا کہنا ہے کہ جمہوریت ڈنڈے اور آنسو گیس سے نہیں اخلاقیات سے چلتی ہے، نیوٹرلز کو پیغام بھجوایا تھا کہ سیاسی عدم استحکام کی ملک کو بڑی قیمت ادا کرنی پڑے گی، مجھے پتہ تھا ان لوگوں سے ملک نہیں سنبھالا جانا، یہ لوگ اپنے 1100 ارب روپے معاف کرانے آئے تھے جو کرالیے۔ انہوں نے قوم سے ایک بار پھر اپیل کی ہے کہ ہفتہ کو ہونیوالے احتجاج میں بھرپور شرکت کریں۔

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے قوم سے خطاب میں کہا ہے کہ کرپٹ لوگ ملک پر مسلط ہوگئے ہیں، بھیڑ بکریوں کی طرح نمائندوں کی خریداری ہوئی تھی، 30 سال سے دو خاندان ملک پر حکومت کرتے رہے، اقتدار میں آنے کے بعد یہ مہنگائی ختم کرنے میں ناکام ہوگئے۔

انہوں نے کہا کہ اتحادی حکومت نے 1100 ارب روپے معاف کرکے خود کو این آر او دے دیا، ہم نے 55 لاکھ نوکریاں دی تھیں، ہماری حکومت میں ہر شعبے میں گروتھ ہورہی تھی، کونسی قیامت آگئی کہ 2 ماہ میں سب کچھ نیچے چلا گیا، مہنگائی آسمان پر پہنچ گئی، معیشت نیچے آگئی، بیروزگاری بڑھتی جارہی ہے۔

عمران خان کا کہنا ہے کہ آج اگر لوگ احتجاج کیلئے نکل رہے ہیں، مظاہرے کررہے ہیں، ان پر ڈنڈے کا استعمال اور تشدد کیا جارہا ہے، لوگ تکلیف میں ہیں، ہمارے ساڑھے تین سال میں ایسی لوڈ شیڈنگ نہیں تھی، ایسا کیا ہوا کہ اتنی لوڈ شیڈنگ شروع ہوگئی، کراچی جیسے شہر میں سخت گرمی میں بدترین لوڈ شیڈنگ ہورہی ہے۔

پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ بجلی پلانٹس بند پڑے ہیں اس وجہ سے بجلی لوڈشیڈنگ ہے، ملک میں بجلی موجود ہے، ن لیگ کے دور میں بنائے گئے 5 بڑے بجلی گھروں سے بجلی نہیں بن رہی لیکن انہیں ادائیگی کی جارہی ہے، قوم اپنے ٹیکس کے پیسے سے ان بجلی گھروں کو کیپیسٹی ادائیگی کررہی ہے، انہوں نے ایل این جی اور کوئلے پر بجلی گھر بنائے، ساہیوال میں کوئلے سے بجلی پیدا کرنے کا پلانٹ بنایا گیا، کراچی سے امپورٹڈ کوئلہ ساہیوال بھیجا جاتا ہے، اس کا ماحولیات پر بھی برا اثر ہے۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ پُرامن احتجاج ہم سب کا جمہوری اور آئینی حق ہے، 25 مئی کو ہمارے احتجاج میں شامل خواتین اور بچوں پر بدترین تشدد کیا گیا، لوگوں کے گھروں میں داخل ہوکر چادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کیا گیا، ایسا کسی آمریت میں بھی نہیں دیکھا جیسا انہوں نے جمہوریت میں کیا۔

چیئرمین پی ٹی آئی نے دعویٰ کیا کہ جولائی میں مہنگائی مزید بڑھے گی، حکومت قیمتیں اوپر جانے کی وجہ سے کوئلے اور دیگر مصنوعات نہیں خرید سکتی، معیشت ان سے سنبھالی نہیں جارہی، قیمتیں کنٹرول نہیں ہورہیں، بیرون ممالک سے قرض لینے کیلئے انہوں ںے قومی سلامتی کو خطرے میں ڈال دیا۔

عمران خان نے عوام سے ایک بار پھر احتجاج میں شرکت کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ ہفتہ کو اسلام آباد میں تاریخی احتجاج کریں گے، کراچی، لاہور، ملتان، پشاور سمیت دیگر شہروں میں بھی مظاہرے ہوں گے، زندہ قوم بن کر اس احتجاج میں شامل ہوں، پر امن احتجاج کریں، توڑ پھوڑ نہ کریں اس سے ہمارے ملک کا ہی نقصان ہوتا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ ڈنڈے، آنسو گیس اور گولی سے کبھی بھی جمہوریت نہیں چلتی، جمہوریت اخلاقی قوت سے چلتی ہے، جسمانی قوت سے ڈکٹیٹر شپ چلتی ہے۔

پی ٹی آئی چیئرمین نے اتحادی حکومت پر الزام لگایا کہ انہوں نے سازش کرکے پاکستان میں سیاسی بحران پیدا کیا، ملک ٹھیک چل رہا تھا، روس سے تیل لینا تھا، بھارت کی طرح اپنے لوگوں پر بوجھ نہیں پڑنے دینا تھا، ہمارے خلاف سازش کرکے ملک کو عدم استحکام کی طرف لے کر گئے۔

سابق وزیراعظم کا کہنا ہے کہ شوکت ترین کو کہا تھا کہ نیوٹرل کو بتائیں کہ اچھی بات ہے وہ نیوٹرل رہنا چاہتے ہیں لیکن یاد رکھیں سیاسی عدم استحکام کی ملک بڑی قیمت ادا کرے گا، مجھے پتہ تھا ان لوگوں سے ملک نہیں سنبھالا جانا، شہباز شریف کی ترقی اشتہارات میں ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان (موجودہ حکومت) کی نیت نہیں تھی ملک کو بحران سے نکالنے کی، جس کام کیلئے انہیں آنا تھا وہ کرلیا، 1100 ارب روپے معاف کرالئے، اگر 500 ارب روپے کی سبسڈی دیدیں تو عوام پر دباؤ کو روکا جاسکتا ہے، لیکن وہ پیسہ ہضم کرکے انہوں نے سارا بوجھ عوام پر ڈال دیا۔

پی ٹی آئی چیئرمین کا کہنا ہے کہ پُرامن احتجاج کیلئے نکلیں لوگوں کو بتائیں کہ ہم زندہ قوم ہیں، اپنی اربوں روپے کی کرپشن بچا کر ملک پر جو ظلم کیا جارہا ہے وہ برداشت نہیں کریں گے۔

IMRAN KHAN

Tabool ads will show in this div