سودسےمتعلق وفاقی شرعی عدالت کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج

اسٹیٹ بنک کی جانب سے سلمان اکرم راجہ نے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کردی۔

اسٹیٹ بینک نے وفاقی شرعی عدالت کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا ہے۔

اسٹیٹ بنک کی جانب سے سلمان اکرم راجہ نے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کردی۔

چار نجی بنکوں نے بھی شرعی عدالت کے فیصلے کےخلاف اپیل دائر کی۔

سپریم کورٹ میں دائراپیل میں بتایا گیا کہ وزارتِ خزانہ،قانون،چیئرمین بنکنگ کونسل اور دیگر کو فریق بنایا گیا۔

اپیل کے مطابق وفاقی شرعی عدالت نے سپریم کورٹ ریمانڈ آرڈر کے احکامات کو مدِنظر نہیں رکھا اورشرعی عدالت نے سیونگ سرٹیفکیٹس سے متعلق رولز کو خلاف اسلام قرار دیا اور رولز میں ترمیم کا حکم دیا۔

اپیل میں استدعا کی گئی کہ شرعی عدالت کے فیصلے کےخلاف اپیل کومنظور کیا جائے اور شرعی عدالت کے فیصلہ میں اٹھائےگئے نکات کی حد تک ترمیم کی جائے۔

شرعی عدالت کا فیصلہ

وفاقی شرعی عدالت نے بروز جمعرات 28 اپریل کو سود کیخلاف درخواستوں پر 19 سال بعد فیصلہ سنا دیا۔ وفاقی شرعی عدالت کے جج جسٹس سید محمد انور نے سود سے متعلق کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ اسلامی بینکنگ کا ڈیٹا عدالت میں پیش کیا گیا، سود سے پاک بینکاری دنیا بھر میں ممکن ہے، وفاقی حکومت کی جانب سے سود سے پاک بینکنگ کے منفی اثرات سے متفق نہیں، معاشی نظام سے سود کا خاتمہ شرعی اور قانونی ذمہ داری ہے۔

بینکوں کیلئے حکم

فیصلے میں کہا گیا کہ اسلامی بینکاری نظام رسک سے پاک اور استحصال کیخلاف ہے۔ ملک سے ربا کا خاتمہ ہر صورت کرنا ہوگا۔ ربا کا خاتمہ اسلام کے بنیادی اصولوں میں سے ہے۔ بینکوں کا قرض کی رقم سے زیادہ وصول ربا کے زمرے میں آتا ہے۔ بینکوں کا ہر قسم کا انٹرسٹ ربا ہی کہلاتا ہے، فیصلے میں یہ بھی کہا گیا کہ قرض کسی بھی مد میں لیا گیا ہو اس پرلاگو انٹرسٹ ربا کہلائے گا۔

عدالت نے حکم دیتے ہوئے کہا کہ ربا مکمل طور پر ہر صورت میں غلط ہے۔

عدالت نے حکومت کو ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ حکومت اندرون اور بیرونی قرض سود سے پاک نظام کے تحت لے۔ عدالتی ریمارکس میں کہا گیا کہ ربا سے پاک نظام زیادہ فائدہ مند ہوگا، سی پیک کیلئے چائنہ بھی اسلامی بینکاری نظام کا خواہاں ہے، تمام بینکنگ قوانین جن میں انٹرسٹ کا ذکر ہے وہ ربا کہلائے گا حکومت تمام قوانین میں سے انٹرسٹ کا لفظ فوری حذف کرے۔

اس موقع پر عدالتی فیصلے میں انٹرسٹ ایکٹ 1839 مکمل طور پر شریعت کےخلاف قرار دیا گیا۔ سود کیلئے سہولت کاری کرنے والے تمام قوانین اور شقیں بھی غیرشرعی قرار دی گئی ہیں۔

عدالت نے ویسٹ پاکستان منی لانڈر ایکٹ بھی شریعت کے خلاف قرار دیتے ہوئے کہا کہ خلاف شریعت قرار دیے گئے تمام قوانین یکم جون 2022 سے ختم ہو جائیں گے۔

حکومتی مؤقف پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے عدالت نے کہا کہ دو دہائیاں گزرنے کے بعد بھی سود سے پاک معاشی نظام کیلئے حکومت کا وقت مانگنا سمجھ سے بالاتر ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ معاشی نظام کو سود سے پاک کرنے میں وقت لگے گا۔ ڈیپازٹ کو فوری طور پر ربا سے پاک کیا جا سکتا ہے۔

فیصلے کے مطابق اسٹریٹ بینک کے اسٹریٹیجک پلان کے مطابق 30 فیصد بینکنگ اسلامی نظام پر منتقل ہو چکی ہے۔ اسلامی اور سود سے پاک بینکاری نظام کیلئے پانچ سال کا وقت کافی ہے۔ توقع ہے حکومت سود کے خاتمے کی سالانہ رپورٹ پارلیمنٹ میں پیش کرے گی۔ آرٹیکل 38 ایف پر عملدرآمد ہوتا تو ربا کا خاتمہ دہائیاں پہلے ہوچکا ہوتا ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے 2002 میں مقدمہ شریعت کورٹ کو دوبارہ فیصلے کیلئے بھجوایا تھا۔ وفاقی شرعی عدالت نے رواں ماہ 12 اپریل کو ملک میں سودی نظام سے متعلق کیس کا فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

پس منظر

وفاقی شریعت کورٹ نے 1992ء میں سود (ربا) کے کیس کا فیصلہ سنا دیا تھا لیکن اس کے بعد یہی کیس 2002ء سے اسی عدالت میں زیر التوا ہے جس کی زیادہ تر وجہ یکے بعد دیگر آنے والے حکومتوں کی ہچکچاہٹ ہے جس کا نتیجہ یہ ہے کہ 2020-21ء کے دوران سود کی ادائیگی کا حصہ پاکستان کی مجموعی آمدنی کا 80؍ فیصد ہو چکا ہے۔ یہ کیس 24؍ جون 2002ء سے زیر التوا تھا جب یونائیٹڈ بینک لمیٹڈ کی جانب سے دائر کردہ سول شریعت ریویو پٹیشن نمبر 1/2000 کو سماعت کیلئے منظور کر لیا گیا تھا۔

وفاقی شریعت کورٹ کی جانب سے 14 نومبر 1991ء کو سنائے گئے فیصلوں میں سود کو غیر اسلامی قرار دیدیا گیا تھا اور 23؍ دسمبر 1999ء کو سپریم کورٹ میں اپیلیٹ شریعت بینچ نے فیڈرل شریعت کورٹ کے 1992ء کے فیصلے کو برقرار رکھا گیا تھا لیکن سپریم کورٹ نے مشرف کے دور میں ان فیصلوں کو کالعدم قرار دیدیا۔ ربا کا کیس فیڈرل شریعت کورٹ کو واپس بھیج دیا گیا تاکہ اس پر چند نکات پر مزید بحث کی جا سکے۔

اس حوالے سے چار اہم نکات کی نشاندہی کی گئی تھی۔

نمبر 1۔ وفاقی شریعت کورٹ کا دائرہ اختیار (جیورسڈکشن)۔

نمبر 2۔ فیصلے پر عملدرآمد سے پیدا ہونے والے عملی مسائل، جن کا اظہار وزارت خزانہ اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے اپنے حلف نامے میں کیا تھا۔

نمبر 3 ربا کی تعریف و تشریح پر مشاہدات اور ساتھ ہی ربا کے قانونی اور اخلاقی پہلوئوں کو علیحدہ کرنا، مہنگائی اور جدید دور میں کی جانے والی انڈیکسیشن۔

نمبر 4۔ دسمبر 1999 میں سنائے گئے فیصلے کے بعد نظر آنے والی غلطیاں۔

وفاقی شریعت کورٹ میں اُن دو دہائیوں کے دوران کئی ججز آئے لیکن ربا کیس کا فیصلہ نہیں ہو پایا اور ججوں کی اکثریت نے کیس کا فیصلہ سنانے میں دلچسپی نہیں دکھائی۔

قومی اسمبلی کی قرارداد

قومی اسمبلی میں وفاقی شرعی عدالت کی جانب سود کےخلاف دیئے گئے فیصلے کےخیرمقدم کیلئے قرارداد منظور کی گئی تھی۔

وفاقی شرعی عدالت کے ججز کو خراج تحسین پیش کرنے کےلیے قرارداد جماعت اسلامی کے رکن قومی اسمبلی مولانا عبدالاکبرچترالی نے پیش کی۔

قرارداد میں کہا گیا کہ ایوان سود کےخلاف دیئے فیصلے پر وفاقی شرعی عدالت کے ججز کو خراج تحسین پیش کرتا ہے۔

SUPREME COURT OF PAKISTAN

INTEREST RATE

خورشید Jun 26, 2022 01:38pm
وفاقی شرعی عدالت کا بہت بہترین فیصلہ ے ۔مگر بہت وقت اس میں لگ گیا ،75سال اور اب پھر اس میں دوبارہ اپیل کی ہوئی ہے ۔بہت افسوس ہیں ۔ حکومت کی جو پانچ سال کا مدت کی بات کر رہا ہے یہ پھر اندھیرو میں چلاجائے گا ۔ بہر حال اللہ تعالیٰ ہم پر رحم کر ۔
Akbar Jun 27, 2022 04:43pm
نجی بنکوں کا نام لکھتے ہوئے کیوں موت آتی ہے، ان کے نام لکھو تاکہ واضح ہوجائے کہ کون سے بنک سود نظام کے حامی ہیں
Nazeer Jun 29, 2022 12:59am
Efforts of Government is highly appreciated and will be successful.
Tabool ads will show in this div