دنیا میں سب سےزیادہ گہرائی میں موجود بحری جہازکا ملبہ مل گیا

یہ لڑائی امریکی فورسزنے فلپائن کو جاپانی قبضے سے چھڑانے کےلیے کی

جنگ عظیم دوم کے دوران تباہ ہونے والے امریکی بحری جنگی جہاز کا ملبہ فلپائن کے سمندری حدود میں ہزاروں میٹر گہرائی میں مل گیا ہے۔

غیرملکی خبرایجنسی کے مطابق یوایس ایس سیموئل بی رابرٹس بحری جہاز 25 اکتوبر 1944 کو سمار کے مرکزی جزیرے کے نزدیک معرکے میں سمندر میں غرق ہوگیا تھا۔

یہ لڑائی امریکی فورسز نے فلپائن کو جاپانی قبضے سے چھڑانے کےلیے کی تھی۔

زیر سمندر موجود عملے نے سیمی بی نامی بحری جہاز کے عشرے اور دیگر حصوں کا 8 روزہ مشن کے دوران تجزیہ کیا۔اس دوران زیرسمندر موجود جہاز کی تصاویر بھی لی گئیں۔

ان تصاویر میں جہاز کی تین ٹیوب پر مشتمل تارپیڈو لانچر اور گن بھی دیکھی جاسکتی ہے۔

اس مشن کے نگران وکٹرویسکووو نے ٹوئٹ کرتے ہوئے بتایا کہ سمندر میں 6895 میٹر گہرائی میں موجود یہ جہاز اب دنیا میں کسی بھی بحری جہاز کا سب سے زیادہ گہرائی میں موجود ملبہ ہے جس کا سروے کیا گیا ہے۔

امریکی بحریہ کے ریکارڈز کےمطابق اس جہاز پرعملے کے224 افراد سوار تھے جن میں سے 89 ہلاک ہوگئے تھے۔ اس جہاز کے تباہ ہونے کے بعد تقریبا 3 روز تک عملے کے افراد پانی میں مدد کے لیے تیرتے رہے تھے۔ کئی افراد شارک کے حملوں پر زخموں کی وجہ سے بھی مارے گئے۔

واضح رہے کہ ٹائیٹینک کا ملبہ زیر سمندر 4000 میٹر میں غرق ہے۔

US NAVY

Tabool ads will show in this div