یاسین ملک کو سزا، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور عسکری قیادت کی مذمت

بھارتی جمہوریت اور نظام انصاف کیلئے آج سیاہ دن ہے، شہباز شریف

پاکستان کی سیاسی اور عسکری قیادت نے بھارت میں کشمیری حریت رہنماء یاسین ملک کو دی جانیوالی سزا کو غیر منصفانہ قرار دیتے ہوئے مذمت کی ہے۔

دہلی کی ایک عدالت نے کشمیری رہنماء یاسین ملک کو دہشت گردی کی سازش اور دہشت گردوں کی مالی معاونت سمیت دیگر بے بنیاد الزامات کے مقدمے میں یکطرفہ طور پر عمر قید کی سزا سنائی۔ یاسین ملک نے واضح طور پر کہا تھا کہ انصاف کیلئے بھیک نہیں مانگیں گے، جو سزا دینی ہے دیدیں۔

وزیراعظم شہباز شریف نے اپنے ٹوئٹر پیغام میں بھارت میں کشمیری رہنماء یاسین ملک کو دی جانیوالی سزا کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ آج بھارتی جمہوریت اور اس کے نظام انصاف کیلئے ایک سیاہ دن ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ بھارت یاسین ملک کو جسمانی طور پر قید کرسکتا ہے لیکن آزادی کے جس تصور کی وہ علامت ہیں اسے قید نہیں کیا جاسکتا۔

وزیراعظم نے کہا کہ بہادر حریت پسند کو عمر قید سے کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی جدوجہد کو مہمیز ملے گی۔

وزیرخارجہ بلاول بھٹو زرداری نے حریت رہنماء یاسین ملک کی شرمناک مقدمے میں غیرمنصفانہ سزا کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان کبھی بھی کشمیریوں کی حق خود ارادیت اور آزادی کیلئے آواز کو دبا نہیں سکتا، پاکستان اپنے کشمیری بہن بھائیوں کے ساتھ کھڑا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کشمیریوں کو ان کی جدوجہد میں تمام ممکنہ حمایت کا سلسلہ جاری رکھے گا۔

ترجمان پاک فوج نے بھی یاسین ملک کو دی جانیوالی غیر منصفانہ اور ظالمانہ سزا کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ جابرانہ ہتھکنڈے کشمیری عوام کے جذبے کو پست نہیں کرسکتے، کشميريوں کی حق خوداراديت کی جدوجہد کیساتھ کھڑے ہيں۔

وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب اور مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز شریف نے بھی یاسین ملک کو دی جانیوالی سزا کی مذمت کی ہے۔

پاکستان

انڈیا

yasin malik

Arifqureshi A May 26, 2022 07:22am
Good.news.chenil
Arifqureshi A May 26, 2022 07:23am
Very nice chanel
Tabool ads will show in this div