لانگ مارچ ختم ، مختلف شہروں میں حالات معمول پر آگئے

عمران خان کیخلاف کارروائی کی اجازت دینے کی درخواست مسترد

تحریک انصاف کا لانگ مارچ ختم ہونے کے بعد ملک کے مختلف علاقوں حالات معمول پر آگئے ہیں۔

تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کی جانب سے لانگ مارچ کے خاتمے کے اعلان کے بعد ملک بھر میں روزمرہ زندگی معمول پر آگئی ہے۔ اسلام آباد میں تحریک انصاف کے اکرتکنوں نے ڈی چوک خالی کرلیا ہے، لاہور میں معمولات زندگی بحال ہوگئے ہیں جب کہ کراچی کی نمائش چورنگی پر بھی زندگی معمول کی طرح رواں دواں ہوگئی ہے۔

عمران خان کیخلاف کارروائی کیلئے درخواست منظور

سپریم کورٹ نے عمران خان کیخلاف کارروائی کی اجازت دینے کی حکومتی استدعا مسترد کردی، عدالت عظمٰی نے رکاوٹیں ہٹانے کے لئے اسلام آباد ہائیکورٹ بار کی درخواست بھی نمٹا دی ۔ مزید تفصیلات

لانگ مارچ ختم

جناح ایونیو اسلام آباد میں لانگ مارچ کے شرکا سے خطاب کے دوران عمران خان نے کہا کہ حکومت نے حقیقی آزادی کی تحریک کو ناکام بنانے کے لیے ہر قسم کا طریقہ استعمال کیا، اس دوران تحریک انصاف کے 2 کارکن جاں بحق ہوئے۔

لانگ مارچ ختم کرنے کاا علان کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ حکومت کو 6 دن دیتا ہوں، اسمبلیاں تحلیل کریں اور جون میں الیکشن کا اعلان کریں، ورنہ ساری قوم کو لے کر اسلام آباد آؤں گا۔

ڈی چوک پہنچے کی کال سپریم کورٹ کی توہین

وزیرداخلہ رانا ثناء اللہ کا کہنا ہے کہ عمران خان کی جانب سے کارکنوں کو ڈی چوک پہنچے کی کال سپریم کورٹ کے فیصلے کی توہین ہے، سپریم کورٹ نے پی ٹی آئی کو ایچ نائن میں اجتماع کی مشروط اجازت دی ہے۔

تازہ اطلاعات کے مطابق پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کی قیادت میں قافلہ جھنگ باہتر انٹر چینج کراس کر گیا۔

اسلام آباد پولیس نے تحریک انصاف کے کارکنوں کو ریڈ زون سے نکالنے کیلئے آپریشن کی تیاری شروع کردی۔ آئی جی اسلام آباد نے تمام بیرونی اور اندرونی انٹری پوائنٹس پر تعینات نفری کو ریڈ زون ایریا میں بلوالیا۔

آئی جی اسلام آباد ڈاکٹر اکبر ناصر خان کا کہنا ہے کہ ریڈ زون میں کسی کو آنے کی ہرگز اجازت نہیں، اگر کسی نے ریڈ زون کے قریب آنے کی کوشش کی تو اس سے سختی سے نمٹا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ دیگر مقامات پر افسران کو ہدایات کی گئی ہیں کہ قوت کا استعمال نہ کریں، مظاہرین سے بھی اپیل ہے کہ وہ پُرامن رہیں اور پولیس پر پتھراؤ اور سرکاری املاک کو نقصان نہ پہنچائیں۔

سپریم کورٹ کا تحریری حکم نامہ

سپریم کورٹ نے تحریری حکم نامہ جاری کردیا، جس میں تاحکم ثانی پاکستان تحریک انصاف کی قیادت اور کارکنوں کی گرفتاری سے روک دیا گیا ہے۔ عدالت عظمیٰ نے ہدایت کی ہے کہ ہائیکورٹس پی ٹی آئی کارکنوں کی درخواستوں پر میرٹ پر فیصلہ کرے۔

تحریری حکم نامے میں مزید کہا گیا ہے کہ وزارت داخلہ طاقت کا غیرضروری استعمال فوری روکے۔

پی ٹی آئی کارکن ڈی چوک پہنچ گئے

عمران خان کے حقیقی آزادی مارچ کے شرکاء فیض آباد اور زیرو پوائنٹ سے رکاوٹیں توڑتے ہوئے ڈی پہنچ گئے، پی ٹی آئی کارکنوں نے ڈی چوک آنے والے راستے سے کنٹینرز ہٹا دیئےجب کہ پولیس بھی پیچھے ہٹ گئی۔

مظاہرین نے درختوں کو آگ لگا دی، اسلام آباد پولیس

اسلام آباد پولیس کے ترجمان نے اپنی ٹوئٹ میں کہا ہے کہ لانگ مارچ میں شریک مظاہرین نے بلیو ایریا میں درختوں اور گاڑی کو آگ لگا دی۔پولیس نے فائربریگیڈکو بلوا لیا۔کچھ جگہوں پر آگ بجھا دی گئی جبکہ مظاہرین نے ایکسپریس چوک میں دوبارہ درختوں کو آگ لگا دی۔ ریڈ زون کی سکیورٹی کو مزید بڑھا دیا گیا ہے۔

مارچ پنجاب میں داخل

عمران خان نے اپنی ٹوئٹ میں کہا ہے کہ ہم پنجاب میں داخل ہوچکے ہیں اور اب انشاءاللہ اسلام آباد کی جانب بڑھیں گے۔ اس امپورٹڈ سرکار کی جانب سے جبر و فسطائیت کا کوئی بھی حربہ ہمیں ڈرا سکتاہے نہ ہی ہمارے مارچ کا رستہ روک سکتا ہے۔

کئی شہروں میں انٹر نیٹ بند

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی نے ملک کے مختلف علاقوں میں انٹر نیٹ سروس بند کردی گئی ہے۔ اس حوالے سے ترجمان پی ٹی اے نے کہا کہ جن علاقوں میں انٹرنیٹ بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ان میں اٹک، گجرات، جی ٹی روڈ اور راولپنڈی کے علاقے شامل ہیں۔ مزید پڑھیے

احتجاج کی اجازت

جسٹس اعجاز الاحسن کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے تحریک انصاف کو وفاقی دارالحکومت کے سیکٹر ایچ نائن میں احتجاج کی اجازت دیتے ہوئے انتظامیہ کو ہدایت کی ہے کہ تمام وکلاء کو فوری رہا کیا جائے۔ مزید پڑھیے

دھرنوں کی سیاست سےنقصان پہنچا، شہباز شریف

وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا ہے کہ ملکی معیشت کو دھرنوں کی سیاست نے نقصان پہنچایا ہے۔ ملکی معیشت کو توانا کرنے کے لیے محنت کررہے ہیں۔ مزید تفصیلات

عمران خان کا کوئی بھی مطالبہ ماننے سے انکار کر دیا

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ حکومت نے عمران خان کے کسی بھی مطالبہ کو ماننے سے انکار کر دیا ہے۔ مزید تفصیلات

پرامن دھرنے کی یقین دہانی

سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران پرامن دھرنے اور امور زندگی متاثر نہ ہونے کی یقین دہانی کروا دی۔ پی ٹی آئی کی جانب سے بابر اعوان نے کہا کہ پی ٹی آئی نے جے یو آئی کو دھرنے کیلئے ایچ نائن گراونڈ دیا تھا، جہاں جے یو آئی نے دو مرتبہ دھرنا دیا وہاں ہی احتجاج کرنا چاہتے ہیں۔

‘کوئی ڈیل نہیں ہوئی’

اپنی ٹوئٹ میں عمران خان نے کہا کہ ہم اسلام آباد کی طرف بڑھ رہے ہیں، کسی ڈیل کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا،اسمبلیوں کی تحلیل اورالیکشن تاریخ کے اعلان تک اسلام آباد میں ہی رہیں گے.

عمران خان نے اپنے لانگ مارچ کا آغاز ولی خان انٹرچینج سے کیا ہے۔ ان کے ہمراہ تحریک انصاف رہنماؤں کے علاوہ سیکڑوں کارکن بھی ہیں۔

معاہدہ کی خبر بے بنیاد ہے

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے اپنی ٹوئٹ میں کہا ہے کہ وفاقی حکومت اور پاکستان تحریک انصاف کے درمیان کوئی معاہدہ نہیں ہوا ۔ حکومت اور تحریک انصاف کے درمیان مذاکرات اور معاہدہ کی خبر بے بنیاد ہے .پولیس اہلکاروں کو شہید کرنے والے مسلح جتھے کے ساتھ کوئی معاہدہ نہیں کیا گیا۔

کوئی رکاوٹ ہميں نہيں روک سکتی

تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے لانگ مارچ کے شرکا سے خطاب کے دوران کہا ہے کہ عوامی احتجاج قانون کے دائرے میں رہ کرہمیشہ کی طرح پُرامن ہوگا اوراحتجاج کرنا ہمارا حق ہے۔ مزید تفصیلات

سپریم کورٹ کا پی ٹی آئی کارکنوں کی رہا ئی کا حکم

سپریم کورٹ نے بغیر کسی چارج اور ایف آئی آر کے گرفتار کارکنوں کو رہا کرنے کا حکم دے دیا ہے۔ سماعت کرنے والے بینچ کے سربراہ جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ جن سیاسی کارکنوں اور قائدین کو بغیر کسی جرم یا ایف آئی آر کے گرفتار کیا گیا ہے انہیں رہا کردیا جاۓ۔ سپریم کورٹ سیاسی معاملات میں نہیں پڑی گی، سیاسی معاملات سے ہمارا لینا دینا نہیں لیکن ہم نے آئینی معاملات کو دیکھنا ہے۔ دونوں فریقین میں رابطے کا فقدان ہے، شائستگی کی کمی کی وجہ سے معاملات بگڑ رہے ہیں، عدالت اس معاملے میں ثالثی کا کردار ادا کررہی ہے۔

اسلام آباد اور خیبر پختونخوا میں زمینی رابطہ منقطع

اسلام آباد کو خیبر پختونخوا سے ملانے والے تمام راستے تاحال سیل ہیں۔ وفاقی ادارلحکومت میں تعلیمی ادارے بند ہیں جب کہ میٹرو سروس بھی معطل ہے۔

لال حویلی پر پولیس کا قبضہ، شیخ رشید کا دعویٰ

ٹوئٹر پر اپنی وڈیو میں شیخ رشید نے کہا کہ لال حویلی میں دوپہر 3 بجے آزادی مارچ کے شرکا سے خطاب کرنا تھا۔ تمام رکاوٹیں عبور کرلی تھیں تاہم پولیس نے لال حویلی پر قبضہ کرلیا ہے۔

پنجاب میں بڑے پیمانے پر پکڑ دھکڑ

پنجاب میں پولیس نے بڑے پیمانے میں پکڑ دھکڑ کر شروع کررکھی ہے۔ لاہور، فیصل آباد، میانوالی اور دیگر علاقوں سے درجنوں رہنماؤں اور کارکنوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

کراچی میں بھی کارکنوں کی گرفتاری

تحریک انصاف نے کراچی کی نمائش چورنگی پر دفعہ 144 کے باوجود دھرنا دینے کی تیاری شروع کی تو پولیس بھی حرکت میں آ گئی، پولیس نے خواتین سمیت چند خواتین کو گرفتار کرکے تھانے منتقل کردیا تاہم ان کے خلاف اب تک کوئی مقدمہ درج نہیں کیا گیا۔

IMRAN KHAN

SUPREME COURT OF PAKISTAN

#LongMarch

Tabool ads will show in this div