نچ پنجابن کے بعد’جُگ جُگ جیو’ کی کہانی بھی چوری کی نکلی

بھارتی مصنف نے کرن جوہرکو چیلنج دےدیا

بھارتی فلم ‘جُگ جُگ جیو’ کے ٹریلرریلیز کے بعد ابرارالحق کے گانے ‘نچ پنجابن’ کی چربہ سازی سامنے آئی تھی لیکن تازہ خبریہ ہے کہ فلم کی کہانی بھی مبینہ طور پرچوری کی گئی ہے۔

بالی ووڈ کے بڑے فلمسازوں میں سے ایک کرن جوہرکی اس فلم میں اپنے گانے کی بلا اجازت استعمال پرابرارنے ٹویٹ میں انہیں ٹیگ کرتے ہوئے کہا تھا کہ کرن جوہر جیسے پروڈیوسرکو میرا گانا کاپی نہیں کرنا چاہیے تھا، یہ میرا چھٹا گانا کاپی کیا گیاہے جس کی ہرگزاجازت نہیں دوں گا۔

کرن جوہرکی جانب سے توکوئی ردعمل سامنے نہیں آیا تاہم کئی بڑے انٹرٹینمنٹ لیبلز کو کنٹرول کرنے والی برطانوی میوزیک ایجنسی مووی باکس نے ابرارکی ٹویٹ پربیان جاری کیا کہ جُگ جُگ جیو میں نچ پنجابن کوشامل کرنے کے لیے باضابطہ طورپر لائسنس دیا گیا ہے۔کرن جوہراوردھرما موویز کو یہ گانا اپنی فلم میں استعمال کرنے کا قانونی حق حاصل ہے، ابرارالحق کا ٹویٹ توہین آمیزاورمکمل طورپرناقابل قبول ہے’۔

مووی باکس کے اس دعویٰ پر ابرارالحق نے جوابی ٹویٹ میں واضح کیا کہ انہوں نے کسی کو بھی اس گانے کے استعمال کی اجازت کا لائسنس نہیں دیا ہے، اگرکوئی ایسا دعویٰ کرہا ہے تو لائسنس پیش کرے۔

سوشل میڈیا پراس چربہ سازی کا قصہ ابھی گرم ہی تھا کہ بھارتی مصنف کی جانب سے کرن جوہرپرفلم کی کہانی چرانے کا الزام بھی عائد کردیا گیا۔

وشال اے سنگھ نامی مصنف نے ٹوئٹرپردعویٰ کیا کہ کرن جوہراوردھرما پروڈکشن نے نئی فلم ‘جُگ جُگ جیو’ کے لیے ان کی ’’بنی رانی ’’کے عنوان سے لکھی گئی کہانی کا اسکرپٹ چرایا ہے۔

مصنف نے ٹوئٹرپرکرن جوہراوردھرما پروڈکشن کو ٹیگ کرتے ہوئے اسکرپٹ کے اقتباس کے ساتھ ٹویٹس کا سلسلہ بھی شیئرکیا جو ان کی جانب سے دھرما پروڈکشن کو بھیجاگیا تھا۔

وشال اے سنگھ کا دعویٰ ہے کہ بنی رانی کا اسکرپٹ دھرما پروڈکشن کو بھیجے جانے کے بعد جبکہ اسے پروڈکشن ہاؤس سے جواب بھی موصول ہوا، لیکن اب اس کے اسکرپٹ کوجگ جگ جیو کی شکل میں ڈھال دیا گیا ہے۔

بھارتی مصنف کا کہنا ہے کہ انہوں نے 2020 میں اپنی کہانی بنی رانی کے نام سے اسکرین رائٹرزایسوسی ایشن انڈیا سے رجسٹرڈ کروائی تھی، بعد ازاں فروری 2020 میں دھرما پروڈکشن کواس حوالے سے آفیشل میل بھیجی تاکہ فلم کو پروڈیوس کرنے کا موقع مل سکے لیکن اب میری کہانی ہی چرا لی گئی ہے۔

بھارتی فلم انڈسٹری میں رائٹرکےعلم میں لائے بغیراسکرپٹ کے استعمال پراحتجاج ریکارڈ کروانے والے وشال سنگھ نے مزید کہاکہ وہ اس پیشہ ورانہ بددیانتی کے خلاف آواز اُٹھائیں گے۔

بھارتی فلمسازکو ٹیگ کرتے ہوئے مصنف نے چیلنج کیا کہ ‘’ اگرکرن جوہرسچے ہیں تو انہیں اوردھرما پروڈکشن کومیرے خلاف کارروائی کرنی چاہیے’’۔

وورن دھون ، کیارہ ایڈوانی، انیل کپوراورنیتو کپور کی یہ فلم 24 جون 2022 کو بڑے پردے پر پیش کی جائے گی۔

Karan Johar

ABRAR UL HAQ

JugJugg jeeyo,

nach punjaban,

Tabool ads will show in this div